جج کی برطرفی حق اور سچ کا فیصلہ ہے،مفتی فضل غفور

جج کی برطرفی حق اور سچ کا فیصلہ ہے،مفتی فضل غفور

  

تخت بھائی (تحصیل رپورٹر) جمعیت علماء اسلام کے صوبائی نائب امیر اور سابق ایم پی اے مفتی فضل غفور نے لاہور ہائی کورٹ کے جج ارشد ملک کو برطرف کرنے کے فیصلے کو حق اور سچ کا فیصلہ قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ اس فیصلے سے یہ واضح ہو گیا ہے کہ ملک میں نیب کو سیاسی انتقام کے طور پر استعمال کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ سابق وزیر اعظم کے خلاف فیصلے دباؤ میں آکر کئے گئے۔انہوں نے کہاکہ جمہوریت کو مضبوط بنانے کے لئے آزاد عدلیہ اور آزاد میڈیا انتہائی ضروری ہے لیکن تحریک انصاف کی حکومت میں اپوزیشن کے خلاف کیسز بنا کر جیلوں میں ڈالا جارہا ہے اور چینی چور آزاد گھوم رہے ہیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے یونین کونسل ڈاگئی کے امیر زر محمد کے والد کے انتقال کی وفات پر اظہار تعزیت کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر جمعیت علماء اسلام تحصیل مردان کے امیر مولانا محمدعاقل انصاری،مولانا قیصر الدین،مفتی سلیم حلیمی،ملک آیازبھی موجود تھے۔ مفتی فضل غفور نے کہاکہ ہم نے پہلے دن سے کہا تھا کہ نیب کو بطور سیاسی ہتھیار استعمال کیا جا رہا ہے اور لاہور ہائی کورٹکے فیصلے سے یہ بات عیاں ہو گئی ہے کہ احتساب عدالت کے جج ارشد ملک نے تمام فیصلے میرٹ کی بجائے دباؤ پر کئے۔انہوں نے کہاکہ عدالت کو اب چینی،آٹا اور پیٹرول کی چوری کرنے والوں کو پکڑ کر نشان عبرت بنانا چاہیئے تاکہ مستقبل میں غریب عوام کے جیبوں پر ڈاکہ نہ ڈالا جاسکے۔انہوں نے کہاکہ عوام کوبی آر ٹی،مالم جبہ اور بلین ٹری سونامی سکیم کے احتساب کا بھی انتظار ہے۔انہوں نے لاہور ہائی کورٹ کے انتظامی کمیٹی کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہاکہ انہوں نے حق اور سچ پر مبنی فیصلہ دے کر عدالتی وقار کو بچا لیا ہے۔انہوں نے کہاکہ عمران خان کی حکومت نے ملک کو دیوالیہ کر دیا ہے۔وزیر اعظم جب کسی بھی چیز کا نوٹس لیتے ہیں تو وہ چیز مارکیٹ سے غائب ہو جاتی ہے اور غریب عوام کے جیبوں پر ایک اور ڈاکہ ڈالا جاتا ہے۔وزیر اعظم قوم کو بتائیں کہ اب تک آٹاچور،چینی چور،پیٹرول چور میں کس کو سزا ہوئی ہے۔عوام انکی اصلیت جان چکی ہے اور بہت جلد عمران خان خود بخود استعفیٰ دے کر یہ اعلان کریں گے کہ ہم نا اہل تھے ہے اور رہیں گے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -