بجلی کی بندش سے عوام ذہنی اذیت کا شکار ہیں،فیصل بلوچ

  بجلی کی بندش سے عوام ذہنی اذیت کا شکار ہیں،فیصل بلوچ

  

کراچی (پ ر)پاکستان مسلم لیگ (ق)کے رہنما فیصل علی بلوچ بجلی کی بندش کے باعث کراچی کے عوام ذہنی اذیت کا شکار ہیں۔شہر کو بجلی فراہم کرنے والے ادارے کو قومی تحویل میں لے کر عوام کو ریلیف فراہم کیا جائے،چیئرمین نیپرا کے نام اپنے کھلے خط میں فیصل بلوچ نے کہا کہ شہر کراچی جسے روشنیوں کا شہر کہا جاتا تھا جو سمندر کنارے آباد ملک پاکستان کی معیشت کو رواں رکھنے میں اپنا اہم کردار ادا کررہا تھا آج محرومیوں میں ڈوبا ہے روزگار موجود نہیں عوام پریشان ہیں روشنیاں ماند پڑ گئیں ہیں کوئی داد رسی کو تیار نہیں۔بجلی کی بندش نے عوام کو جینا دوبھر کردیا ہے۔آپ سے استدعا ہے کہ کھلی سماعت کرکے کراچی کے عوام کی داستان سنیں۔انہوں نے کہا کہ پہلے سسٹم اپ گریڈ کرنے کے نام پر کاپر کا وائر اتارا گیا اربوں روپے عوام کے لوٹے گئے تیل سستا ہوا لیکن بجلی مہنگی کی گئی سوئی گیس سے بجلی جنریٹ کی جارہی ہے فیول ایڈجسٹمنٹ کے نام پر عوام کو لوٹا جاتا ہے اوور بلنگ ایوریج بلنگ بھیج کر 60 گز 80 گز کے مکانوں سے 7000،8000 کے بل وصول کیئے جاتے ہیں سلیب ریٹ سے بل کو اور بڑھا دیا جاتا ہے اب 2.89 روپے یونٹ پر بڑھائے جارہے ہیں جو مزید ظلم ہے اس ظلم کو روکیں عوام کی پریشانیوں میں اضافہ نہ کریں عوام کو بہت رلا دیا گیا ہے اب عوام حکمرانوں کو نہ رلا دے کراچی کے سمندر کو روکنا بہت مشکل ہو جائے گا ساتھ ہی اس ادارے نے پیداوار میں کوئی اضافہ نہیں کیا۔انہوں نے کہا کہ لوڈ شیڈنگ کی انتہا ہے سارا دن لائٹ نہیں ہوتی بزرگ بچے اس گرمی میں نڈھال ہیں جائیں تو کہاں جائیں کورونا کی وجہ سے تمام پارکس بھی بند ہیں لائٹ ہے نہیں پھر بل کس بات کے ہزاروں کے بل عوام کیسے ادا کریں کیا جو تھوڑی بہت روشنی شہر میں ہے اسے مکمل اندھیروں میں دھکیلنے کی کوئی سازش تو نہیں عوام بہت ہی پریشان ہیں اگر اب بھی نیپرا نے ایکشن نہ لیا اور اس ادارے کو حکومتی تحویل میں نہ لیا اس لائسنس منسوخ نہ کیا تو یہ عوام کے حقوق پامال کرنے جیسا ہوگا

مزید :

صفحہ آخر -