جنوبی پنجاب کی ترقی کیلئے انگریز کے غلاموں سے چھٹکارا حاصل کرنا ضروری: سراج الحق

  جنوبی پنجاب کی ترقی کیلئے انگریز کے غلاموں سے چھٹکارا حاصل کرنا ضروری: سراج ...

  

ملتان (سٹی رپورٹر)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ آج ورلڈ بنک کے سروے کے مطابق جنوبی(بقیہ نمبر23صفحہ6پر)

پنجاب میں سب سے زیادہ غربت ہے۔وڈیر ے اور جاگیردار جواقتدار پر مسلط ہیں،ا نگریزوں کے گھوڑے نہلاتے اور بوٹ پالش کرتے تھے۔ یہ صبح و شام جھوٹ بولتے ہیں،ان کے نزدیک جھوٹ بولنا یو ٹرن ہے۔جنوبی پنجاب کے لوگوں کو بتانا چاہتاہوں کہ یہ لوگ جو آپ سے ووٹ اور سپورٹ لیتے ہیں آپ کے خیر خواہ نہیں۔ملک میں صحت تعلیم اورمعیشت کا نظام بری طرح تباہ ہے یہ پی ٹی آئی کا پاکستان ہے۔آج 22 ماہ بعد پتا چلا کہ آئی جی کو پانچ بار تبدیل کیا گیا،چیئرمین ایف بی آر کو پانچ بار تبدیل کیا گیا سیکرٹریز کو بار بار تبدیل کیا جارہا ہے۔ انصاف کے سب دروازے بند ہیں ایک مقتول کی لاش کو سڑک پر رکھنا پڑتاہے جس کے بعد انصاف ملتا ہے۔ انصاف کا دروازہ سونے کی چابی سے کھلتا۔ یہ ہے وہ تبدیلی، جسے پی ٹی آئی تبدیلی کہتی ہے۔یہ اولیائکی سرزمین ہے یہ جائز نہیں کہ یہاں جعلی لوگوں اور جھوٹوں کااقتدار ہو۔ہمیں موقع ملا تو ہم اس ملک میں سود کی جگہ زکواۃ اور عشر کا نظام قائم کریں گے۔ اور غریب و امیر یکساں نظرآتے ہیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ملتان میں سینئر نائب صدر پی ٹی آئی تحصیل ملتان ملک سجاد وینس کی طرف سے دیئے گئے استقبالیہ سے خطاب اور میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔تقریب سے نائب امیر و سابق رکن قومی اسمبلی میاں محمد اسلم،ضلعی امیر صفدر ہاشمی اور ملک سجاد وینس نے بھی خطاب کیا۔اس موقع پر ملک سجاد وینس نے تحریک انصاف سے مستعفی ہوکر اپنے قبیلے اور ساتھیوں سمیت جماعت اسلامی میں شمولیت کا اعلان کیا۔سینیٹر سراج الحق نے ملک سجاد وینس کو جماعت اسلامی میں خوش آمدیدکہتے ہوئے کہا کہ آج تک آنے والی ہر حکومت نے جنوبی پنجاب کے لوگوں کے ساتھ کئے گئے کسی ایک وعدے کو پورا نہیں کیا۔جنوبی پنجاب میں غربت و افلاس،بے روز گاری ہے۔خطے کی ترقی کیلئے انگریز کے غلاموں سے چھٹکاراحاصل کرنا بہت ضروری ہے۔نو آبادیاتی نظام کے آلہ کار آج بھی جاگیر دار اور سرمایہ داروں کی شکل میں پاکستان پر مسلط ہیں۔اگر جنوبی پنجاب کے عوام اپنے علاقہ کی ترقی چاہتے ہیں تو انہیں اس جاگیردارانہ اور سرمایہ دارانہ ذہنیت کے خلاف اٹھ کھڑا ہونا ہوگا۔ جماعت اسلامی ہی وہ واحد جماعت ہے جو جاگیر داری نظام کے خاتمہ اور عوام کو تعلیم صحت،روز گار اور انصاف کی فراہمی کیلئے جدوجہد کررہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ملک سجاد احمد وینس نے بہت سوچ کر شعوری طور پر جماعت اسلامی میں شمولیت کا اعلان کیا میں انہیں خوش آمدید کہتا ہوں۔ پاکستان کو ایک اسلامی فلاحی ریاست بنانا،ایک ایسا ملک جہاں بندوں کی غلامی نہیں بلکہ اللہ کی غلامی ہو، جہاں مظلوم اور غریب انصاف سے محروم نہ ہوں۔انہوں نے کہا کہ ہم ایسا پاکستان چاہتے ہیں جہاں انصاف صحت تعلیم اور حلال طریقہ سے روزگار ملے۔نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان میاں محمد اسلم نے ملک سجاد احمد وینس کو جماعت میں شمولیت پر مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہاں آپ کو ہر شخص اپنے دل میں جگہ دے گا،آپ کو گلے لگائے گا۔جماعت اسلامی پاکستان کی واحد جمہوری جماعت ہے۔ یہ کوئی خاندانی جماعت نہیں۔ اس کے کسی عہدیدار اور کارکن پر کرپشن کا کوئی داغ نہیں۔ سب سے بڑا خدمت کا نیٹ ورک اس وقت جماعت اسلامی اور الخدمت فاو ¿نڈیشن کا ہے۔ اس کے کارکنوں نے اپنی جان کو ہتھیلی پر رکھا اور کورونا جیسی وبا میں عوام کی خدمت کی۔اس موقع پر ملک سجاد وینس نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی فلاحی ریاست کے قیام کے لیے اللہ تعالی نے ہمیں جو وسائل دیئے ہیں انہیں استعمال کرتے ہوئے اس زمین پر اللہ کے نظام کو نافذ کرنا ہے۔ عمران خان نے کہاتھا کہ یکساں نظام تعلیم ہو گااور مدینہ کی اسلامی ریاست ہوگی لیکن آج افسوس ہوتا کہ عمران خان نے پوری قوم اور ملک کو دھوکہ دیا۔ کیا تھانہ میں انصاف ہے؟ کیا روزگار میسر ہے؟ کیا تعلیم کا نظام بہتر ہوا ہے؟ ہم کوئی بھیڑ بکریوں کی طرح نہیں کہ جو ہمیں جیسے ہانکتا ہوا لے جائے ہمیں سوچنا ہوگا کہ کہ روز قیامت ہم اللہ حضور کیا جواب دیں گے۔ اللہ نے مجھے شعور دیا میں ہوش اور ذمہ داری کے ساتھ اس فیصلہ پر پہنچا ہوں کہ جماعت اسلامی کے پاس جو منشور ہے وہ کسی کے پاس نہیں۔میں تحریک انصاف کے سینئر نائب صدر کے عہدہ سے استعفٰی دیتا ہوں اور جماعت اسلامی میں شمولیت کا اعلان کرتا ہوں سید منور حسن مرحوم سابق امیر جماعت اسلامی پاکستان و ناظم اعلیٰ جمیعت کی یاد میں مرکز جمعیت میں تعزیتی ریفرنس کا انعقاد کیا گیا جس میں سینیٹر سراج الحق امیر جماعت اسلامی پاکستان نے خصوصی شرکت کی اور سید منور حسن مرحوم کی دینی، سیاسی خدمات کو شاندار انداز میں خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ سید صاحب کی زندگی تحریک کے لئے قابل رشک اور قابل تقلید ہے اور ان کا زہد، تقوی اپنی زات میں منفرد تھا۔ اس موقع پر حمزہ محمد صدیقی ناظم اعلیٰ اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سید صاحب کی رحلت سے جو خلا پیدا ہوا وہ کبھی پر نہیں ہوسکے گا۔ اللہ پاکستان کو ان کا بہترین نعم البدل عطاء فرمائے۔ اس موقع پر سابق ناظمین اعلیٰ جمعیت امیر العظیم صاحب، سینیٹر مشتاق احمد خاں، حافظ نعیم الرحمن صاحب، سید عبد الرشید ممبر صوبائی اسمبلی سندھ، راشد نسیم،زبیر گوندل، زبیر حفیظ صاحب، اور حسین خاں صاحب جاپان سے اور عبدالماک مجاہد صاحب نے امریکہ سے اور ڈاکٹر کمال احمد،شبیر خان نے تعزیتی ریفرنس میں شرکت کی اور سید صاحب کی زندگی ان کے ساتھ تعلق کے حوالے سے اظہار خیال کیا۔

سراج الحق

مزید :

ملتان صفحہ آخر -