گورنر پنجاب چوہدری سرور کی مداخلت کام دکھا گئی،انجینئرنگ یونیورسٹی اساتذہ کی تنخواہوں میں کٹوتی کا فیصلہ واپس،8 جولائی کا احتجاج بھی ملتوی

گورنر پنجاب چوہدری سرور کی مداخلت کام دکھا گئی،انجینئرنگ یونیورسٹی اساتذہ ...
گورنر پنجاب چوہدری سرور کی مداخلت کام دکھا گئی،انجینئرنگ یونیورسٹی اساتذہ کی تنخواہوں میں کٹوتی کا فیصلہ واپس،8 جولائی کا احتجاج بھی ملتوی

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) ٹیچنگ سٹا ف ایسوسی ایشن انجینئرنگ یونیورسٹی لاہور کے صدر ڈاکٹر فہیم گوہرا عوان نے اعلان کیا ہے کہ گورنر پنجاب چوہدری سرور کی ہدایت پر یوای ٹی انتظامیہ نے اساتذہ، ملازمین کی تنخواہوں میں کٹوتی کا فیصلہ واپس لے لیا ہے،تنخواہوں میں دس سے پچاس فیصد کٹوتی کی گئی تھی جو آج ہمارے اکاؤنٹس میں واپس آگئی ہے، یونیورسٹی کے خزانہ دار نے نوٹیفکیشن جاری کردیا ہے،جس پر ہم گورنر پنجاب،ڈاکٹر فضل خالد اور ڈاکٹر منصور سرور کا شکریہ اداکرنے  کے ساتھ ہی 8 جولائی کو گورنر ہاؤس کے باہر احتجاج کا فیصلہ واپس لیتے ہوئے اسے ملتوی کرنے کا اعلان کرتے ہیں۔

لاہور پریس کلب میں ترجمان ٹی ایس اے ڈاکٹر تنویر قاسم، ایگزیکٹو ممبر ڈاکٹر اویس ارشدکے ہمراہ ایک ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہم امید کرتے ہیں کہ حکومت یوای ٹی کے مالی بحران کا مستقل بنیادوں پر حل تلاش کرے گی،حکومت رچنا انجینئرنگ کالج گوجرنوالہ اور محمد نوازشریف یوای ٹی ملتان کی تعمیر میں یوای ٹی کے بجٹ سے استعمال کیا گیا ایک ارب روپیہ واپس کرے تاکہ یوای ٹی اپنے پاؤں پر کھڑی ہو سکے،وزیر اعظم عمران خاں سے ہمارا مطالبہ ہے کہ وہ یوای ٹی کے لیے بیل آؤ ٹ پیکج کا اعلان کریں،ٹی ایس اے نے وائس چانسلر کو ایک خط لکھا ہے جس میں ہم نے مطالبہ کیا ہے کہ یوای ٹی کے گزشتہ دس سال کا آڈٹ تھرڈ پارٹی سے کرایا جائے۔

انہوں نے کہا کہ کرونا کی وجہ سے یونیورسٹی میں آن لائن کلاسز چل رہی ہیں تمام اساتذہ ریگولر کلاسز لے رہے ہیں،آج بھی ہم کلاسز لے کر آئیں ہیں جو ہماری اولین ذمہ داری ہے،آن لائن کلاسز میں اساتذہ اپنے ذاتی نیٹ اودیگر لوازمات اپنی جیب سے اداکررہے ہیں تاکہ سٹوڈنٹس کا کوئی حرج نہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ100 سال کی حامل یہ قدیم پبلک سیکٹر یونیورسٹی تاریخ کے بد ترین مالی بحرا ن کا شکار ہے،پاکستان میں یوای ٹی پبلک سیکٹر کی سب سے بڑی ٹیکنیکل یونیورسٹی ہے جس کا سب زیادہ میرٹ ہے،جہاں غریبوں کے بچے پڑھتے ہیں،دیگر اداروں کی نسبت جہاں سب سے کم فیس لی جارہی ہے،ملک کا سب سے بڑا ادارہ ہے جو سالانہ ہزاروں انجینئرز پیدا کرتا ہے،جو پوری دنیا میں اپنی خدمات انجام دے رہے ہیں،ہم اس ادارہ کی توقیر اور شناخت کو برقرار رکھنا چاہتے ہیں،بدقسمتی سے کٹوتی کے اقدام سے یوای ٹی اور اسکے اساتذہ کا تشخص مجروح ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف حکومت مالی بحران کا رونا روتی ہے اور دوسری طرف وزیر اعلی پنجاب اپنے من پسند شعبوں کے ملازمین کےلیےتین تین اضافی تنخواہوں کےاعزازیےکااعلان کرتےہیں،مخصوص شعبوں کومراعات دینےسےدیگرشعبوں میں احساس محرومی پیدا ہوتا ہے،اسی طرح ایف آئی اے،نیب اوردیگروفاقی اداروں کوتنخواہوں کےعلاوہ الاوئنسز دیےگئےہیں حتی کہ مختلف محکموں میں تعینات انجینئرز جو ہمارے شاگر د ہیں کو ٹیکنیکل الاؤنسز دیے گئے ہیں جو تنخواہ کا ڈیڑھ گنا ہے،ہمیں اس پر اعتراض نہیں ہے مگر یہ پک اینڈ چوز سراسر ناانصافی ہے،یہ طبقاتی نواز شات کی بد ترین مثال ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پوری دنیا میں اساتذہ کے وقار کا خیال رکھا جاتا ہے ہم چاہتے ہیں کہ حکومت پاکستان بھی اساتذہ کے وقار کا خیال رکھے،یوای ٹی کے اساتذہ نے قو می سانحات میں حکومت کی اپیل پر ہمیشہ اپنے تنخواہوں میں سے مدد کی ہے،وزیر اعظم کے کورونا ریلیف فنڈ میں یوای ٹی کے اساتذہ وملازمین نے 25 لاکھ روپے دیے ہیں۔ ٹی ایس اے کے صدر کا کہنا تھا کہ ہائیر ایجوکیشن کے بجٹ میں کٹ لگا کر حکومت نے یونیورسٹیوں کا گلا دبا دیا ہے،یونیورسٹی کے اساتذہ کی اپنی الگ پہچان اورتشخص ہوتا ہے، یہ اگر اپنے مطالبات کی منظوری کے لیے سڑکوں پر آئیں گے تو یہ نیک شگون نہیں ہو گا،ہمیں کوئی شوق نہیں ہے سڑکوں پر آنے کا لہذا حکومت ازخود دلچسپی لے اور اعلی تعلیم اور یونیورسٹیز کے لیے روکے گئے فنڈز بحال کرے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ فیسوں میں اضافہ مالی بحران کا حل نہیں،کبھی بھی یونیورسٹیاں فیسوں سے نہیں چلا کرتیں،ہمیں ذاتی طور پرافسوس ہوتاہےجب بچوں کی فیسوں میں اضافہ ہوتا ہےمگر یونیورسٹیوں کو مجبور کیا جاتا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ ہمیں امید ہے کہ اب دوبارہ کٹوتیوں کا سلسلہ نہیں ہو گا اگر خدانخواستہ ایسا ہوا تو ہم احتجاج کا حق محفوظ رکھتے ہیں جو ہمارا آئینی اور جمہوری حق ہے۔

انہوں نے گورنر پنجاب چوہدری سرور کی علم اور استاد دوستی کو سراہا اور کہا کہ ہم چانسلر کی حیثیت سے ان سے امید کرتے ہیں کہ وہ یوای ٹی کو مالی بحران سے مستقل طور پر نجات دلانے کے لیے اپنی کوششوں کو جاری رکھیں گے۔ انہوں نے اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف، ایم پی اے حنا پرویز بٹ ودیگر ارکان پارلیمنٹ، سول سوسائٹی کا بھی شکریہ اداکیا جنہوں نے ٹی ایس اے کے حق میں آواز بلند کی اور ساتھ دیا جبکہ یونیورسٹی اساتذہ کی آواز کو اعلیٰ حکام تک پہنچانے پر میڈیا کا بھی شکریہ ادا کیا ۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -