حکومتی پالیسیوں کے باعث صنعت اور زراعت کا شعبہ بہتر نہیں ہو گا،میاں ایوب

حکومتی پالیسیوں کے باعث صنعت اور زراعت کا شعبہ بہتر نہیں ہو گا،میاں ایوب

  



لاہور(نمائندہ خصوصی) پیپلز پارٹی پنجاب کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل میاں محمد ایوب نے کہا ہے کہ مالی سال 2015۔16کا وفاقی بجٹ مایوس کن ہونے کے ساتھ ساتھ مزدور کش ہے اور اس بجٹ میں ملک کی غریب اور مہنگائی کی چکی میں پسی ہوئی عوام کے لیے کوئی بھی ریلیف نہیں دیا گیا ہے بجٹ تقریر الفاظ کے گورکھ دھندے اور ہیر پھیر کے علاوہ کچھ بھی نہیں ہے حکومت نے بجٹ میں عوام کو مایوس کیا ہے اور عوام نے حکمرانوں سے جو امیدیں لگا رکھی تھیں ان امیدوں کا حکومت نے خون کیا ہے پہلے میڈیا کے زریعے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن میں دس فیصد اضافے کا عندیہ دیا گیا تھا لیکن وہ بھی بجٹ میں کم کرکے صرف.5 7فیصد کردیا گیا ہے اگر یہ کہا جائے کہ وفاقی بجٹ ایک فریب اور دھوکہ ہے تو بے جا نہ ہو گا ۔

میاں محمد ایوب نے کہا کہ حکومت کی موجودہ پالیسیوں سے صنعت اور زراعت میں کوئی بہتری نظر نہیں آرہی نہ ہی اس طبقے کے لئے بجٹ میں کچھ رکھا گیا ہے حکمران اسی طرح سے ڈینگیں مارتے رہیں گے اور آئندہ سال بھی انہیں قرضوں پر گزارا کرنا پڑے گا اس بجٹ میں صحت، تعلیم، زراعت، صنعت سمیت تمام شعبوں کی ترقی کو نظر انداز کرتے ہوئے صرف امیروں ، جاگیرداروں اور سرمایہ داروں کو فائدہ پہنچایا گیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ یہ بات افسوسناک ہے کہ صحت کے شعبے کے بجٹ میں گذشتہ سال کی نسبت کمی کی گئی ہے سرکاری ملازمین کی تنخواہیں صرف ساڑھے سات فیصد بڑھانا" اونٹ کے منہ میں زیرے" کے برابر ہے ملازمین کی تنخواہیں مہنگائی کی شرح میں اضافے کے مطابق بڑھائی جانی چاہیں بعض سرکاری ملازمین کی تنخواہوں کو دوگناکرناباقی ملازمین کی ساتھ سراسر زیادتی ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1