2014-15 میں قیمتوں میں اضافے کا رجحان

2014-15 میں قیمتوں میں اضافے کا رجحان

  



 لاہور ( رپورٹ : اسد اقبال )صو بائی دارالحکومت سمیت پنجاب بھر میں مالی سال برائے 2014-15میں اشیائے خور دو نوش کی قیمتو ں میں اضافے کا رجحان رہا جبکہ مہنگائی کا تناسب بڑھنے سے صارفین کی قو ت خرید بری طرح متاثررہی سب سے زیادہ اضافہ ملٹی نیشنل کمپنیو ں نے کیا جن کی مختلف پراڈکٹس کی قیمتو ں میں 40فیصد تک اضافہ دیکھنے میں آیا دوسری جانب اجناس ،مشروبات ، سبزیو ں و پھلو ں کی قیمتو ں میں 12سے 35فیصد تک اضافہ ہوا جن میں دال ماش ، دال چنا ، دال مسور ، دال مو نگ ، چینی ، لہسن ، ٹماٹر ، پیاز ، اور مصالحہ جات شا مل ہیں ۔ پاکستان رپورٹ کے مطابق گزشتہ مالی سال کے دوران ملٹی نیشنل کمپنیو ں نے از خو د اپنی پراڈکٹس کی قیمتو ں میں ہو شر با اضافہ کیا جس میں چائے پتی کاٹن کی قیمت میں 42سو روپے ، صابن پیٹی قیمت میں 680روپے ،شیمپوکاٹن کی قیمت میں 800 ، ٹو تھ پیسٹ درجن قیمت میں 70 ، دودھ ڈبہ کی قیمت میں 4 اور مچھر مار ادویات کی قیمتو ں میں 80روپے تک اضافہ کیا گیا دوسر ی جانب تھو ک منڈیو ں میں چینی بوری قیمت میں 8سوروپے ، دال ماش فی کلو قیمت میں 40 ، دال چنا فی کلو قیمت میں 15 ، دال مسور فی کلو قیمت میں 22 ، دال مو نگ کی قیمت میں 20 ، چکن برائلر کی فی کلو قیمت میں 33روپے اضافہ کیا گیا ، لہسن فی کلو قیمت میں 26 روپے، پیاز 10 ، سیب 80روپے کلو اور کیلے کی قیمت میں 40روپے درجن تک اضافہ اور مصالحہ جات کی قیمتو ں میں 25فیصد تک اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔مارکیٹ رپورٹ کے مطابق گزشتہ مالی سال کے دوران اشیائے خوردو نوش کی فروخت میں 30سے 40فیصد تک کمی واقع ہوئی جس کی وجہ جنو بی پنجاب میں سیلاب کی تباہ کاریاں اور مہنگائی کے تناسب میں اضافہ ہے ۔ روزنامہ پاکستان سے گفتگو کر تے ہوئے انجمن تاجران اکبر ی منڈی کے سینئر نائب صدر عمر خالق چوہدری نے کہا کہ مہنگائی کے جن کو بو تل میں بند کر نا پر ائس کنٹرول افسران کے بس سے باہر ہو چکا ہے ملٹی نیشنل کمپنیاں پاکستان میں مہنگائی میں اضافے کی ذمہ دار ہیں جن پر چیک اینڈ بیلنس نہ ہونے سے ملٹی نیشنل کمپنیاں اپنی پر اڈکٹس کی قیمتو ں میں من چاہا اور جب چاہا اضافہ کر دیتے ہیں جن کو نکیل ڈالنے کی ضرور ت ہے ۔ انھو ں نے کہا کہ تھو ک منڈیو ں میں اشیاء کی قیمتیں بڑھانا ڈیلرز کا کام نہیں بلکہ بیو پاری اور کارخانہ دار قیمتوں میں اضافہ کر تے ہیں تو مجبورا ڈیلرز کو بھی اشیاء کی قیمت بڑھانا پڑتی ہے جس کا سارا بو جھ عوام کو بر داشت کر نا پڑتا ہے جس کے لیے حکو مت و قت کو تو جہ دینے کی ضرورت ہے کیو نکہ مہنگائی کے باعث شہریوں کی قو ت خر ید جواب دے رہی ہے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...