پاکستانی تاجرمیکسیکو کی بڑی مارکیٹ سے بھرپور فائدہ اٹھائیں‘سفیر السز کنچولا

پاکستانی تاجرمیکسیکو کی بڑی مارکیٹ سے بھرپور فائدہ اٹھائیں‘سفیر السز ...

  



لاہور (پ ر) پاکستان میں میکسیکو کے سفیر السز کنچولا (Ulises Canchola)نے پاکستانی تاجروں پر زور دیا ہے کہ وہ میکسیکو کی بڑی مارکیٹ سے بھرپور فائدہ اٹھائیں۔ وہ لاہور چیمبر کے صدر اعجاز اے ممتاز سے لاہور چیمبر میں ملاقات کے موقع پر اظہار خیال کررہے تھے۔ لاہور چیمبر کے سینئر نائب صدر میاں نعمان کبیر اور نائب صدر سید محمود غزنوی نے بھی اس موقع پر خطاب کیا۔ سفیر نے کہا کہ پاکستان جنوبی ایشیاء کا ایک اہم ملک ہے اور میکسیکو اس کے ساتھ تجارتی و معاشی تعاون کو فروغ دینا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تجارت کو فروغ دینے کے ان گنت مواقع ہیں جن سے فائدہ اٹھانے کے لیے دونوں ممالک کے تاجروں کو بھرپور کردار ادا کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ میکسیکو کے تاجر پاکستان میں کاروبار کرنے کے طریقہ کار سے آگاہی چاہتے ہیں لہذا لاہور چیمبر اس سلسلے میں کردار ادا کرے۔ انہوں نے لاہور چیمبر کے صدر کو دعوت دی کہ وہ تجارت و سرمایہ کاری کے مواقعوں کا جائزہ لینے کے لیے ایک وفد میکسیکو بھجوائیں۔ انہوں لاہور چیمبر کے صدر کو یقین دہانی کرائی کہ وہ چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے ساتھ مسلسل رابطے میں رہ کر باہمی تعلقات کے استحکام کے لیے کردار ادا کریں گے۔ لاہور چیمبر کے صدر اعجاز اے ممتاز نے کہا کہ پاکستان اور میکسیکو کے درمیان 70ء کی دہائی سے بہترین تعلقات چلے آرہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگرچہ دونوں ممالک ایک دوسرے کے تجارتی حصے دار ہیں لیکن باہمی تجارت اچھے تعلقات کی عکاسی نہیں کرتی لہذا تجارت کے فروغ کے لیے دونوں ممالک کو ٹھوس اقدامات اٹھانا ہونگے۔ سال 2014ء میں پاکستان کی میکسیکو کو برآمدات کا حجم 120ملین ڈالر جبکہ درآمدات کا حجم 39ملین ڈالر تھا۔ پاکستان میکسکو کوبرآمدات میں کپاس، کپڑا، میڈیکل آلات اور کھیلوں کا سامان جبکہ درآمدات میں کیمیکلز ، آئرن اینڈ سٹیل اور الیکٹریکل آلات شامل ہیں۔ اعجاز اے ممتاز نے کہا کہ دونوں ممالک کے نجی شعبے کو پاکستان اور میکسیکو کی مارکیٹ سے بھرپور فائدہ اٹھانا چاہیے۔ لاہور چیمبر کے سینئر نائب صدر میاں نعمان کبیر نے کہا کہ پاکستان اور میکسیکو کے تاجروں کے درمیان مشترکہ منصوبہ سازی دونوں ممالک کے تعلقات کو مزید مستحکم کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ تاجروں کو لائٹ انجینئرنگ ، فوڈ پراسیسنگ، آٹوموبیلفش، آٹوپارٹس، ہوم اپلائنسز اور پلاسٹک کے شعبوں میں مشترکہ منصوبہ سازی کرنی چاہیے۔

مزید : کامرس


loading...