شیر گڑھ،ایم ایم اے تحصیل کی صوبائی اسمبلی کی نشستوں کے ٹکٹ پر ڈیڈ لاک برقرار

شیر گڑھ،ایم ایم اے تحصیل کی صوبائی اسمبلی کی نشستوں کے ٹکٹ پر ڈیڈ لاک برقرار

  

شیرگڑھ (نامہ نگار) ایم ایم اے تحصیل تخت بھائی کی صوبائی اسمبلی کی دو نشستوں کے ٹکٹ کی تقسیم میں ڈیڈ لاک برقرار ضلعی تنظیم نے مسئلہ کو پارلیمانی کمیٹی کو بھیج دیا مگر حتمی فیصلہ نہ کرنے کی صورت میں پورے ضلع میں ایم ایم اے کی ٹکٹوں کی تقسیم کا مسئلہ مرکزی قیادت کو بھجوا دیا جماعت اسلامی پی کے 55کے ٹکٹ حاصل کرنے اور جے یو پی پی کے 54کے ٹکٹ حاصل کرنے پر بضد ہے جبکہ پی کے 54کا ٹکٹ فارمولہ کے مطابق جماعت اسلامی اور پی کے 55کاٹکٹ جے یو آئی کے حصہ میں آتاہے ٹکٹوں کی تقسیم پر ڈیڈ لاک کے بعد مسئلہ مرکز بھجوادیاگیاہے تفصیلات کے مطابق ایم ایم اے ضلع مردان کی سطح پر ٹکٹوں کی تقسیم پر کوئی فیصلہ نہ کرسکی بار بار اتحاد میں شامل جماعتوں کے اہم اجلاس کے باوجود ڈیڈ لاک برقرار رہا جماعت اسلامی پی کے 55کاٹکٹ سابق صوبائی وزیر فضل ربانی ایڈوکیٹ کو دینے کے لئے حاصل کرنے کی کوشش کررہی ہے جبکہ جے یوپی پی کے 54کاٹکٹ جے یو پی کے آیاز خان کے لئے حاصل کرنے کی ضد پر اڑی ہوئے ہیں جبکہ ٹکٹوں کی تقسیم کے لئے 2013کے فارمولہ کے مطابق پی کے 54جماعت اسلامی کے حصہ میں اور پی کے 55جے یو آئی کے حصہ میں آتے ہیں جماعت اسلامی کسی بھی صورت میں پی کے 55کے ٹکٹ سے دستبردار ہونے کے لئے تیار نہیں اتحادی جماعتوں کی ضلعی قیادت کے بار بار اجلاس کے باوجود جب کوئی فیصلہ نہ ہوسکا تو مسئلہ صوبائی پارلیمانی کمیٹی کو بھجوادیا گیا مگر وہاں پر بھی ڈیڈ لاک برقرار رہا تو ضلعی قیادت نے پورے ضلع کی ٹکٹوں کی تقسیم مرکزی قیادت کو حوالہ کیا اب انتظار ہیں کہ ایم ایم اے کی مرکزی قیادت ضلع مردان کے پارٹی ٹکٹوں کی تقسیم کے حوالے سے اور خاص کر پی کے 55اور پی کے 54کے ٹکٹوں کی بابت میں کیا فیصلہ کرے گی دوسری طرف سے ضلع مردان کے قومی اسمبلی کے تینوں اور صوبائی اسمبلی کے 8نشستوں پر ایم ایم اے میں شامل دو بڑی جماعتوں جمعیت علماء اسلام اور جماعت اسلامی کے امیدواروں نے کاغذات نامزدگی حاصل کرلئے ہیں اور آنے والے دو تین دن کے اندر یہ کاغذات جمع کرانے کا امکان رد نہیں کیاجاسکتاہیں

مزید :

پشاورصفحہ آخر -