کس ریسٹورنٹ میں چوہے کھانے پر دندناتے پھر رہے ہیں ؟ نام جان کر آپ کی پریشانی کی کو ئی حد نہ رہے گی

کس ریسٹورنٹ میں چوہے کھانے پر دندناتے پھر رہے ہیں ؟ نام جان کر آپ کی پریشانی ...
کس ریسٹورنٹ میں چوہے کھانے پر دندناتے پھر رہے ہیں ؟ نام جان کر آپ کی پریشانی کی کو ئی حد نہ رہے گی

  

واشنگٹن(نیوز ڈیسک)اگر آپ باہر سے کھانے کے شوقین ہیں اور بڑے بڑے ریستورانوں کا نام سنتے ہی آپ کی رال ٹپکنے لگتی ہے تو عالمی شہرت یافتہ فوڈ چین ’برگر کنگ‘ کے ایک ریستوران کے کچن کے یہ اندرونی مناظر آپ کو ضرور دیکھنے چاہئیں۔ ڈیلی سٹار کے مطابق سوشل میڈیا صارف شینٹل جونسن نے برگر کنگ کے ایک ریستوران کے کچن میں موجود ڈبل روٹی کے پیکٹوں کی ویڈیو شیئر کی ہے جس کے مناظر ایسے کراہت انگیز ہیں کہ دیکھ کر ہی متلی محسوس ہونے لگے۔ اس ویڈیو میں میز پر پڑے ڈبل روٹی کے پیکٹ دیکھے جا سکتے ہیں جن کہ اندر چوہے چھپن چھپائی کھیلتے نظر آ رہے ہیں۔ ڈبل روٹی کے بڑے بڑے پیکٹوں کے اندر چوہوں کی یہ اچھل کود دیکھنے سے تعلق رکھتی ہے۔ 

یہ ویڈیو سامنے آنے پر ایک مقامی ہیلتھ انسپکٹر نے برگر کنگ کی مذکورہ برانچ کا دورہ کیا تو یہ دیکھ کر حیران رہ گیا کہ کچن میں ہیم برگر اور چکن سینڈ وچ کے اوپر چوہوں کا فضلہ پڑا تھا۔ ڈویژن آف پبلک ہیلتھ کی ترجمان اینڈریہ وچ کک نے بتایا کہ آفس آف فوڈ پروٹیکشن کو یکم جون کے روز اس ریستوران کے متعلق باقاعدہ شکایت موصول ہوئی جس پر اس معائنہ کیا گیا ۔ امریکی ریاست ڈیلاویئر میں واقع اس برگر کنگ ریسٹوران کا دورہ کرنے والے محکمہ صحت کے حکام بھی کانوں کو ہاتھ لگانے پر مجبور ہوگئے ۔ 

ڈویژن آف پبلک ہیلتھ سے وابستہ ڈاکٹر کیرل راٹے کی جانب سے فوری طور پر ریسٹوران کے مالک کو ایک خط بھیجا گیا جس میں کہا گیا کہ یہ ریستوران عوامی صحت کیلئے خطرہ ہے لہٰذا اسے فوری طور پر بند کیا جائے ۔ معائنہ کرنے والے حکام کا کہنا ہے کہ نہ صرف ہیم برگر اور سینڈوچ جیسی چیزوں پر چوہوں کا فضلہ ملا بلکہ آئس مشین کے اوپر ، واٹر ہیٹر کے اوپر ، ڈرائی سٹوریج میں اور فرائر کے آس پاس بھی چوہوں کا فضلہ موجود تھا۔ کچن کی چھت سے بھی رساؤہو رہا تھا جبکہ اس کے پیچھے گودام میں گٹر کے ٹوٹے ہوئے پائپ سے حشرات اور مکھیاں اندر آرہی تھیں۔ 

برگر کینگ کی جانب سے جاری کیے گئے ایک بیان میں یہ کہہ کر جان چھڑانے کی کوشش کی گئی کہ محکمہ صحت کے حکام نے جس برانچ پر چھاپا مارا ہے وہ تھرڈ پارٹی کی ملکیت ہے اور اسے آزادانہ طور پر چلایا جا رہاہے ۔ کمپنی کا مزید کہنا ہے کہ وہ خود بھی اس معاملے کی تحقیق کر رہے ہیں تاکہ آئندہ ایسا افسوسناک واقعہ پیش نہ آئے ۔ 

ویڈیو دیکھیں:

مزید :

ڈیلی بائیٹس -