جنوبی ایشیا کے گنجان آباد علاقوں میں کورونا تیزی سے پھیل سکتا ہے:ڈبلیو ایچ او کی وارننگ

جنوبی ایشیا کے گنجان آباد علاقوں میں کورونا تیزی سے پھیل سکتا ہے:ڈبلیو ایچ او ...

  

جینیوا(مانیٹرنگ ڈیسک)عالمی ادارہِ صحت (ڈبلیو ایچ او)نے کہا ہے کہ چونکہ جنوبی ایشیا میں کروناوائرس کے کیسز تیزی سے بڑھ رہے ہیں اس لیے گنجان آباد خطے میں بیماری کے تیزی سے بڑھنے کا خطرہ ہے۔ڈبلیو ایچ او کے صحت ایمرجنسی پروگرام کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر مائیکل ریان نے جینیوا میں ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ خاص طور پر جنوبی ایشیا میں نہ صرف بھارت بلکہ بنگلہ دیش، پاکستان اور جنوبی ایشیا کے دوسرے ممالک میں جہاں بڑی گنجان آبادی ہے،یہ بیماری بڑے پیمانے پر نہیں پھیلی ہے لیکن ایسا ہونے کا خطرہ ہمیشہ سے موجود ہے۔ چونکہ یہ بیماری سماجی گروہوں میں پیدا ہوتی ہے اور اپنے قدم جما لیتی ہے، یہ کسی بھی وقت تیز ہو سکتی ہے۔ بھارت میں کیسوں کی تعداد میں ہر ہفتہ اوسط تہائی اضافہ ہو رہا ہے لہٰذا شاید بھارت میں اس وبا کا دوگنا ہونے کا وقت اس مرحلے سے تقریبا 3ہفتے دور ہے۔لہٰذا وبا کے سفر کی سمت جارحانہ نہیں ہے لیکن یہ اب بھی بڑھ رہی ہے۔ڈبلیو ایچ او کے چیف سائنسدان سومیا سوامی ناتھن نے کہا کہ میرے خیال میں سب سے اہم بات یہ ہے کہ واقعی میں شرح نمو اور وبا کے دوگنا ہونے کے وقت کا سراغ لگانے کے ساتھ ساتھ اس بات کو یقینی بنائیں کہ یہ اس سے بدتر نہ ہو۔چونکہ بھارت گنجان آباد شہروں کے ساتھ ایک متناسب اور بڑا ملک ہے اس لیے ماسک پہننا ضروری ہے۔

ڈبلیو ایچ او

مزید :

صفحہ اول -