پاکستان میں کورونا کے وار تیز لیکن افغانستان میں کیا صورتحال ہے ؟ ہمسایہ ملک سے بھی پریشان کن خبر آ گئی

پاکستان میں کورونا کے وار تیز لیکن افغانستان میں کیا صورتحال ہے ؟ ہمسایہ ملک ...
پاکستان میں کورونا کے وار تیز لیکن افغانستان میں کیا صورتحال ہے ؟ ہمسایہ ملک سے بھی پریشان کن خبر آ گئی

  

کابل (ڈیلی پاکستان آن لائن )کورونا وائرس نے اب پاکستان کے بعد افغانستان میں بھی ڈیرے ڈالنے شروع کر دیئے ہیں جہاں سے خبریں موصول ہو رہی ہیں کہ وائرس سے متاثرہ افراد کے اضافے کے باعث ہسپتالوں میں بیڈز کی کمی ہو رہی ہے جبکہ گزشتہ روز حکام کی جانب سے وارننگ بھی جاری کی گئی کہ ” آفت آ رہی ہے “ ۔

گلف نیوز کی رپورٹ کی رپورٹ میں کہا گیاہے کہ افغان ہیلتھ اتھارٹیز کی جانب سے جاری کردہ اعدادو شمار کے مطابق گزشتہ چوبیس گھنٹوں میں مزید 761 کیسز سامنے آئے ہیں جس کے بعد ملک میں متاثرہ افراد کی تعداد 19 ہزار 551 تک پہنچ گئی ہے جس میں ہر روز اضافہ ہوتا جارہاہے ۔

افغانستان کے وزیر صحت احمد جواد عثمانی نے رپورٹرز کو بتایا کہ ہمارے ہسپتال میں جگہ تقریبا ختم ہو چکی ہے ، مستقبل قریب میں ہمارے پاس مزید گنجائش متوقع نہیں ہے ۔حکام کا کہنا تھا کہ کابل سمیت کورونا وائرس سے متاثرہ افرا دکی تعداد توقع سے زیادہ آرہی ہے ۔

کابل کے گورنر محمد یعقوب حیدری نے وزیر صحت کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ” آفت آ رہی ہے “۔انہوں نے کہا کہ صرف کابل میں ہی ممکنہ طورپر دس لاکھ لوگ کورونا وائرس کے متاثرہ ہو سکتے ہیں۔ تاہم افغانستان میں اب تک اس وبا کے باعث 327 افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں ۔

یعقوب حیدری کا کہناتھا کہ ہمیں رپورٹس آرہی ہیں کہ اموات میں اضافہ ہواہے ، لوگ رات کے اندھیرے میں لاشوں کو دفنا رہے ہیں ، ہم روزانہ دس سے 15 ایمبولینسوں کو لاشوں سے بھر رہے ہیں ۔

وزیر صحت کا کہناتھا کہ حکام چہرے پر ماسک پہننے اور سوشل ڈسٹینسنگ پر اگلے تین ماہ تک سختی سے عملدرآمد کروائیں گے تاکہ وبا کو قابو کیا جا سکے ۔ ماہرین کا کہناتھا کہ افغانستان مشتبہ کیسز میں سے صرف 20 فیصد کے روزانہ ٹیسٹ کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -