حکومت کے ایک ہزار دنوں میں صرف پروپیگنڈا فعال باقی تمام ادارے زوال کا شکار رہے:سراج الحق 

حکومت کے ایک ہزار دنوں میں صرف پروپیگنڈا فعال باقی تمام ادارے زوال کا شکار ...
حکومت کے ایک ہزار دنوں میں صرف پروپیگنڈا فعال باقی تمام ادارے زوال کا شکار رہے:سراج الحق 

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ حکومت کے ایک ہزار دنوں میں صرف پروپیگنڈا فعال باقی تمام ادارے زوال کا شکار رہے،حکومت کی تین سالہ کارکردگی نے 22 کروڑ عوام کو غم سے نڈھال کر دیا،حکومت کے جھوٹے وعدوں دعووں سے ہر طرف مایوسیاں پھیل چکی ہیں، ایک کروڑ نوکریاں ، پچاس لاکھ گھر ، ایک ارب درخت باقی اعلانات کی طرح جھوٹے پروپیگنڈا تک محدود رہے ،کچھ پالیسیاں نہیں، ملک کامعاشی نظام مکمل طور پرآئی ایم ایف کےقبضے میں ہے،مزدور،کسان ،سرکاری، غیر سرکاری ملازمین اور چھوٹے تاجر سب ہی پریشان ہیں،ملک مافیاز کے رحم وکرم پر ہے،آڈیٹر جنرل کا آڈٹ رپورٹ سے انکار کا مطلب پوری دال ہی کالی ہے،موجودہ نظام مکمل ناکام ہو چکا ،اسلامی نظام تمام مسائل کا حل ہے،جماعت اسلامی کی جدوجہد اس ملک میں نظام کی تبدیلی ہے۔

 منصورہ میں تربیت گاہ سے خطاب کرتے ہوئےسراج الحق نے کہا کہ آئی ایم ایف زرعی ملک کے کسانوں کو مکمل طور پر تباہ کرنا چاہتا ہے ،حکومت کھاد ، خام تیل ، زرعی آلات ، بجلی پر مزید ٹیکس کی بجائے سبسڈی کا اعلان کرتے ہوئے ظالمانہ شرائط سے انکار کا اعلان کرے،پہلے ہی گنا، گندم ، چاول ، کپاس پیدا کرنے والے ملک کی عوام خود ان چیزوں سے محروم ہے ،مہنگائی نے عام آدمی کی کمر توڑ دی غربت ، بے روزگاری میں ریکارڈ اضافہ حکومت کی نا اہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر گندم کی ریکارڈ فصل ہوئی ہے تو آٹا 90روپے کلو کیوں ہے ؟کرونا فنڈ کے بارہ سو ارب روپے کے پیکج کی تفصیلات سامنے لائی جائیں تاکہ اس حوالے سے اصل صورت حال کا اندازہ ہو سکے،آڈیٹر جنرل کی طرف سے آڈٹ رپورٹ میں تاخیر کچھ تو غلط ہے ، کی طرف اشارہ ہے،مختلف بین الااقوامی ادارے پہلے ہی پاکستان میں کرپشن کے اضافے پر بات کر چکے ہیں،حکومت نے احتساب سب کا اور کرپشن کے خاتمے کے دعوے کا خود ہی مذاق بنا دیا ہے،ہر طرف مافیاز کا راج ہے آدھی درجن مافیا نے ملک کو مفلوج کر دیا ہے جس مافیا پر بھی تھوڑی سی تحقیق ہوئی اس کے پیچھے وزیر اعظم کے دوست نظر آتے ہیں ۔

امیر جماعت اسلامی نے کہا کہ بجٹ میں عوام سے پہلے سے بھی زیادہ جھوٹ بولنے کی تیاری ہو رہی ہے۔آئی ایم ایف کی شرائط پر بننے والے بجٹ میں عوام کے لیے کوئی اچھی خبر نہیں ہے، پاکستان کی معیشت آئی سی یومیں ہے،جھوٹے اشاریوں پر قوم کو بیوقوف بنانے کی کوشش اب بند ہونی چائیے، حکومت اگر دعوے میں سچی ہےتو قیمتیں25جولائی 2018کی سطح پرلانےکااعلان کرے،ملک معاشی،سیاسی ، اقتصادی بحرانوں کا شکار ہے،وزیر اعظم نے اب تک عوام کے لیے کوئی رائٹ ٹرن نہیں لیا،تین سال میں مزید لاکھوں افراد خط غربت سے نیچے جاچکے ہیں، بجٹ میں عوام کو ریلیف نہ ملا تو مہنگائی سے تنگ عوام کے لیے دو وقت کی روٹی کھانا ممکن نہیں رہے گا۔

سراج الحق کا کہنا تھا کہ مغربی طاقتیں اور اسلام دشمن عناصر مسلمانوں کو لڑا رہے ہیں،عالم اسلام اپنے دشمنوں کو پہچانے اور سازشوں کا مقابلہ کرنے کے لیے یک جان ہو جائے، آپس کی لڑائیاں مسلمانوں کو کمزور کر رہی ہیں،امت کو تقسیم کرنا یہودیوں کا ایجنڈا ہے، بیت المقدس کی حفاظت امت مسلمہ کا اولین فرض ہے،او آئی سی فوری طور پر غزہ کی بحالی کے لیے فنڈ قائم کرنے کا اعلان کرے ۔

مزید :

قومی -