ریلوے نے مزید 5مسافر ٹرینوں کی نجکاری کی منظوری دیدی

  ریلوے نے مزید 5مسافر ٹرینوں کی نجکاری کی منظوری دیدی

  

 اسلام آباد(این این آئی)پاکستان ریلوے نے مزیدپانچ مسافرگاڑیوں کی نجکاری کی منظوری دیدی،جلدنجی کمپنی کے حوالے کردیاجائیگا،  مسافر ٹرینیں 2ارب92کڑور70لاکھ سالانہ میں آؤٹ سورس کی منظوری دے دی گئی،جناح، سر سید، مہران،فیض احمدفیض،بدر ایکسپریس کی آنے والی بولیوں کی منظوری دے دی گئی،سب سے مہنگی جناح ایکسپریس1ارب37کڑور30لاکھ سالانہ میں ریلوے کی ہی نجی کمپنی پراکس نے حاصل کی ہے۔ریلوے حکام نے بتایا ہے کہ نجکاری سے ریلوے کو23کڑور80لاکھ روپے سالانہ اضافی آمدن ہوگی۔”این این آئی“کے مطابق پاکستان ریلوے نے مسافرٹرنیوں کی نجکاری کے دوسرے مرحلے میں 15ٹرنیوں کی نجکاری کااشتہاردیاتھا جس میں سے 5مسافرٹرنیوں کی بولی کااس قابل سمجھا گیاکہ ان کی منظوری دی جائے جبکہ باقی ٹرنیوں کی بولیاں مقرر حد سے کم ودیگر وجوہات کی بناپر مسترد کردی گئیں جن ٹرینوں کی نجکاری کی منظوری دی گئی ہے ان میں راولپنڈی سے کراچی کے درمیان چلنے والی سرسید ایکسپریس،لاہور کراچی کے درمیان چلنے والی جنا ح ایکسپریس،کراچی میرپورخاص کے درمیان چلنے والی مہران ایکسپریس،لاہور ناروال  کے دمیان چلنے والی فیض احمدفیض اورلاہور فیصل آباد کے درمیان چلنے والی بدر ایکسپریس شامل ہیں۔ ریلوے کی کمپنی پراکس نے جناح ایکسپریس 1373ملین روپے سالانہ اور فیض احمدفیض 29ملین روپے سالانہ میں حاصل کی ہے۔نجی کمپنی ام ایس آراے اے ایس نے سرسیدایکسپریس1350ملین اور مہران ایکسپریس92ملین روپے سالانہ میں حاصل کی ہے جبکہ ایک ٹرین بدر ایکسپریس اے ایس انٹرپرائز نے83ملین روپے سالانہ میں حاصل کی ہے جبکہ پاکستان ریلوے جناح ایکسپریس کاچلارہا تھا تو اس کی سالانہ اوسط آمدن1183ملین،فیض احمد فیض کی24ملین،سرسید ایکسپریس کی1337ملین،مہران 88ملین اور بدر57ملین روپے سالانہ تھی۔ریلوے حکام کاکہناہے کہ مزید پانچ ٹرنیوں کو آوٹ سورس کرنے سے ریلوے کی آمدن 238ملین سالانہ اضافہ ہوگا۔ یہ پانچوں ٹرینیں 2689ملین روپے سالانہ کماتی تھیں جبکہ نجکاری 2927ملین سالانہ میں ہوئی ہے اس طرح ریلوے کو238ملین  روپے سالانہ زیادہ آمدن ہوگی۔

ریلوے 

مزید :

صفحہ آخر -