کورونا، مزید 76اموات، سندھ میں تعلیمی سرگرمیاں بحال، دکانیں رات 8بجے تک کھلی رہیں گی، سٹاف کی ویکسی نیشن لازمی قرار

    کورونا، مزید 76اموات، سندھ میں تعلیمی سرگرمیاں بحال، دکانیں رات 8بجے تک ...

  

  اسلام آباد،لاہور،کراچی،کوئٹہ(سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں) جان لیوا وائرس کے وار جاری، اموات اور نئے کیسز کا سلسلہ رک نہ سکا، ملک میں کورونا سے مزید 76افراد انتقال کر گئے،اموات کی مجموعی تعداد21265ہو گئی،مثبت کیسز کی شرح 3.1فیصدریکارڈ کی گئی، ملک میں 1629نئے کیسز رپورٹ ہوئے۔ اب تک کورونا سے متاثر ہونے والوں کی مجموعی تعداد 9لاکھ 32 ہزار 140 ہو گئی ہے،نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے مطابق  ملک بھرمیں ایکٹو کیسز کی تعداد 48 ہزار 937 ہے اور 8 لاکھ 63 ہزار 111افراد کورونا سے صحت یاب ہوچکے ہیں۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان کا کہنا ہے کہ کورونا کے خلاف جنگ ابھی ختم نہیں ہوئی۔ کورونا ایس او پیز پر عملدرآمد کی مانیٹرنگ جاری ہے۔این سی او سی کو ایس او پیز پر عملدرآمد سے متعلق تشویش ہے۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے اپنے ایک ویڈیو پیغام میں کہاہے کہ سندھ میں ابھی تک کورونا کیسز کی شرح نیچے نہیں آسکی ہے۔ سندھ میں کورونا کی تیسری لہر ذرا دیر سے آئی اس لیے اس کا سائیکل زرا پیچھے ہے۔ سندھ میں کورونا کے مثبت کیسز کی شرح 6 سے 7 فیصد ہے۔ سندھ میں احتیاطی تدابیر پر عمل درآمد میں کمی ہونے پر تشویش ہے۔ وزیرصحت پنجاب یاسمین راشد نے کہا ہے کہ صوبے میں کورونا شرح 2 فیصد کے قریب ہے، ایس او پیز پر عملدرآمد سے کورونا شرح میں مزید کمی آ سکتی ہے۔لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے صوبائی وزیر صحت یاسمین راشد کا کہنا تھا کہ ہرضلع میں ویکسین موجود ہے، کوشش ہے ہر دیہی و شہری علاقے میں ویکسین پہنچا دیں۔ پنجاب میں کورونا کی شرح 2 فیصد تک آ گئی، پارکس اور مزارات کھول دیئے، انڈور شادیوں پر پابندی ختم نہیں ہوئی،کورونا وبا کے پیش نظر ہفتہ وار لاک ڈاؤن کا دوسرا روز ہے، لاہور میں مارکیٹیں، بازار اور کاروباری مراکز بند ہیں۔ادھر سندھ حکومت نے پیر سے دوکانیں رات 8 بجے تک کھولنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ اتوار کووزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی صدارت میں کورونا وائرس پر صوبائی ٹاسک فورس کا اجلاس ہوا، جس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ پیر 7جون سے صوبے بھر میں دکانیں رات 8بجے تک کھولی جائیں گی، تاہم تمام دکانوں کے سٹاف کو ویکسین لازمی کرانا ہوگا، اور 15دن بعد دکانوں کے سٹاف کے ویکسینیشن سرٹیفکیٹس چیک کیے جائیں گے۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ آؤٹ ڈور ڈائننگ کی رات 12بجے تک کی اجازت ہوگی، اور آؤٹ ڈور ڈائننگ پر لوگوں کے درمیان فاصلہ رکھنا لازمی ہوگا، 2ہفتوں کے بعد شادی ہالز، آٹ ڈور شادیوں کی اجازت ہوگی، ساحلِ سمندر، بیچ اور سی ویو بھی کھولنے کا اعلان کردیا گیا ہے، جبکہ سیلون بھی ایس او پیز کے تحت کھولنے کی اجازت ہوگی۔دوسری جانب وزیرتعلیم سندھ سعید غنی نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنی ٹویٹ میں اعلان کیا کہ  ٹاسک فورس کے اجلاس میں تعلیمی اداروں کو کھولنے کا فیصلہ کرلیا گیا ہے، نویں جماعت سے جامعات تک کے تعلیمی ادارے کل سے کھولنے کی اجازت ہوگی، تمام تدریسی و غیر تدریسی عملے کی ویکسینیشن لازمی ہوگی۔کراچی کے ضلع وسطی کے چار مختلف ٹاونز میں مائیکرو اسمارٹ لاک ڈاون نافذ کر دیا گیا، گلبرگ، نارتھ ناظم آباد، لیاقت آباد اور نارتھ کراچی میں مائیکرو اسمارٹ لاک ڈاون لگایا گیا۔نوٹی فکیشن کے مطابق متاثرہ علاقوں میں اتوارسے 19جون تک اسمارٹ لاک ڈاون کا نفاذ رہے گا، متاثرہ علاقوں میں آنے اور جانے والے تمام افراد کو ماسک پہننا لازمی قراردیاگیا، متاثرہ علاقوں کے لوگوں کی غیر ضروری نقل و حرکت پر پابندی ہوگی۔دوسری جانب بلوچستان میں کورونا وائرس کے پھیلاؤکی شرح میں پھر اضافہ ہونے لگا، صوبے میں کورونا وائرس کی شرح میں مسلسل اضافہ ریکارڈ کیا جا رہا ہے۔محکمہ صحت بلوچستان کے مطابق گزشتہ 4 روز کے دوران بلوچستان میں کورونا کے پھیلاو کی شرح میں تقریبا 3 فیصد اضافہ ہوا ہے۔گزشتہ روز بلوچستان میں کورونا وائرس کے کیسز مثبت آنے کی شرح 8 اعشاریہ 2 فیصد رہی۔2 روز قبل صوبے میں کورونا کیسز مثبت آنے کی شرح 6 اعشاریہ 8 فیصد، 3 روز قبل 6 اعشاریہ 4 فیصد اور 4 روز قبل 5 اعشاریہ 32 فیصد تھی۔گرشتہ روز بلوچستان میں کورونا وائرس کے 1 ہزار 690 ٹیسٹ کیئے گئے، جن میں سے 140 میں وائرس کی تصدیق ہوئی۔

کورونا ہلاکتیں 

مزید :

صفحہ اول -