حکومت کا جہانگیرترین کیخلاف کیسز نیب کے حوالے کرنے کا فیصلہ

     حکومت کا جہانگیرترین کیخلاف کیسز نیب کے حوالے کرنے کا فیصلہ

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر) وفاقی حکومت نے ایف آئی اے کی جانب سے شوگر سکینڈل میں کلین چٹ ملنے کے قومی امکانا ت کے بعد جہانگیر ترین کیخلاف کیسز نیب کے حوالے کر نے کا فیصلہ کیا ہے۔ ذرائع کے مطابق ایف آئی اے نے دوران تحقیقات اور ریکارڈ کی چھان بین کے بعد یہ موقف اختیارز کیا تھا کہ جہانگیر ترین کیخلاف کیس نہیں بنتا۔ ان پر  شوگر سکینڈل میں الزامات ثابت نہیں ہوسکے۔انکا تمام ٹیکس ریکارڈ اور دستاویز ات شوگر ملز کے اکاؤنٹس سب کے سب اپ ٹو ڈیٹ ہیں جبکہ جہانگیر باقاعدگی سے ٹیکس بھی ادا کر تے ہیں۔مشیر احتساب شہزاداکبر نے گزشتہ ہفتے لاہور میں ایف آئی اے کی تفتیشی ٹیم سے ملاقات  بھی کی تھی اور اس میں  ان کو بتایا گیا تھا جہانگیر ترین کیخلاف کوئی ٹھوس شواہد نہیں ہیں اور اگر انکا ادھور ا چالان پیش کیا گیا تو عدالت اسے اٹھا پھینکے گی اور ایف آئی اے کو سبکی کا سامنا ہوگا۔ اسی لئے ایف آئی اے جہانگیر ترین کو نہ تو گرفتار کرسکی ہے نہ ہی عدالت سے ضمانت منسوخ کرواسکی ہے۔ ذرائع کا کہناہے رپورٹ میں بھی اس چیز کا ذکر کیا گیا ہے جہانگیر ترین پر سٹہ مافیا کا حصہ ہونے یا منی لانڈرنگ میں ملو ث ہونے کے الز ا مات ثابت نہیں ہوئے اب وفاقی حکومت نے نیب کے ذریعے جہانگیر ترین کا کیس آگے بڑھانے کا فیصلہ کیا اور نیب آرڈیننس کے تحت نیب کسی بھی تحقیقا تی یا تفتیشی ادارے سے  زیر تفتیش کیس از خود اپنے پاس لے کر اس کی تحقیقات کرسکتا ہے۔ ذرائع کا کہناہے جہانگیر ترین کیخلاف بجٹ کی منظور ی کے بعد سخت ایکشن بھی ہوسکتا ہے۔

تین کلیئر

مزید :

صفحہ اول -