سخاکوٹ‘ جرگہ کی کاوشوں سے دیرینہ دشمنی کا خاتمہ

سخاکوٹ‘ جرگہ کی کاوشوں سے دیرینہ دشمنی کا خاتمہ

  

سخاکوٹ(نمائندہ  پاکستان) جرگہ ممبران کی کوششیں کامیاب ہو گئی۔ سخاکوٹ میں دیرینہ دشمنی دوستی میں بد ل گئی۔دشمنی میں دونوں فریقین سے چار افرادجاں بحق ہو چکے تھے۔دونوں فریقین نے جرگہ ممبران اور علماء کے موجودگی میں قرآن پاک پرہاتھ رکھ کر آئندہ بھائیوں کی طرح زندگی گزارنے کا عہد کیا۔ تفصیلات کے مطابق سخاکوٹ مرشاخیل کے دو خاندانوں حارث خان ولد فیض محمد (مرحوم) وغیرہ اور فخر عالم اور موسیٰ خان وغیرہ کی درمیان جاری دشمنی کا خاتمہ ہو گیا ہے۔ دشمنی میں دونوں فریقین سے چار افراد جن میں فریق اول سے تین افراد امجد خان، حامد خان اور عدنان خان پسران سلطنت خان اور فریق دوم سے فیض محمد جاں بحق ہو گئے تھے۔ فریقین کے درمیان راضی نامہ کے لئے سابق ناظم اور ممتاز شخصیت حق نواز خان ایڈوکیٹ، صفدر عباس ایڈوکیٹ، آصف خان، شاہ فیصل، جاسم علی ایڈوکیٹ، اعظم خان، یوسف خان وغیرہ نے کوشش کئے جو بالاآخر کامیاب ہوئیں اور دونوں فریقین کے درمیان راضی نامہ ہو گیا۔ راضی نامہ کے سلسلے میں حجرہ حق نواز خان ایڈوکیٹ پر ایک اجتماع منعقد کیا گیا جس میں سابق ایم پی اے سید محمد علی شاہ باچہ سمیت ممتاز علماء کرام، علاقائی مشران اور منتخب ممبران نے شرکت کی۔ اس دوران دونوں فریقین نے قرآن پا ک پر ہاتھ رکھ کر دشمنی ختم کرنے اور ائندہ بھائیوں کی طرح رہنے کا اعلان کیا۔ راضی نامہ تقریب سے جرگہ ممبر حق نواز خان ایڈوکیٹ، جماعت اسلامی کے ضلعی امیر مولانا جمال الدین، حاجی محمد اعظم خان، مولانا صاحب حق جھاڑے مولوی صاحب، جاسم علی ایڈوکیٹ اور حاجی لیاقت علی سمیت دیگر مقررین نے خطاب کیا۔ علماء کرام نے قرآن و حدیث کی روشنی میں راضی نامہ کے اہمیت پر تفصیلی روشنی ڈالی اور کہا کہ سالہاسال سے چلے آنے والے دشمنی کے خاتمے پر آج شیطان کے گھر میں ماتم ہے جبکہ دشمنی سے متاثرہ خاندانوں میں برکت نازل ہوگی۔ جرگہ ممبران اور علاقائی مشران نے کہا کہ کسی بھی مسئلے کا حل جرگہ اور راضی نامہ ہے اور اسی جرگہ اور راضی نامہ کے ذریعے پُرانے دشمنیاں اور مسائل حل ہور ہے ہیں۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -