ختم نبوتؐ کے قانون میں تبدیلی کسی صورت قبول نہیں‘ مولانا عطاء الرحمان

ختم نبوتؐ کے قانون میں تبدیلی کسی صورت قبول نہیں‘ مولانا عطاء الرحمان

  

شبقدر(تحصیل رپورٹر) ختم نبوتؐ کے قانون میں تبدیلی کسی صورت قبول نہیں موجودہ حکمران یہودیوں اور امریکی ایجنڈے کاربند ہے۔ ان خیالات کا اظہار جمعیت العلمائے اسلام ف کے صوبائی امیر اور سینیٹر مولانا عطاء الرحمن نے رشکئی شبقدر میں شمولیتی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ جمعیت العلماء اسلام ف کوئی جذباتی پارٹی نہیں نہ کوئی حادثاتی پارٹی ہے جمعیت العلماء اسلام ف ہمارے اقابرین نے آج سے تقریباً 150سال پہلے اس بنیاد رکھی ہے اور ہمارے اقابرین نے اپنا سوچ اور نظریہ اور اپنی فکر اور اسی مٹی کیلئے ہمارے اقابرین نے عالمی کفر اور عالمی قوتوں کے خلاف جمہوری آج ان ہی کا سوچ ہمارے اور آپ کیلئے باقی ہے آج بھی جمعیت العلماء اسلام ف عالمی قوتوں کے خلاف لڑ رہے ہیں اور آج کل پاکستان کی حکومت امریکہ اور یہودیوں کا ایجنٹ ہے ان کی کوشش ہے کہ ریاست مدینہ کے نام پر اور اسلام کے نام پر جو نظام ریاست مدینہ میں حضورﷺ نے رائج کیا تھا تو یہ لوگ ریاست مدینہ کے نظام میں رکاوٹ ہے۔ ان عالمی قوتوں کا مقابلہ ہمارے بزرگوں نے کیا تھا ا ور یہ عالمی فکر اور یہودیوں ایجنٹ جس منصوبے سے یہی آئے ہیں اور یہ کوشش ہے کہ قادنیوں کے متعلق جو بل پاس ہوا ہے یہ ختم کریں گے تو ہم ان سے یہ کہتے ہیں کہ اس مٹی پر جمعیت العلمائے اسلام کا ایک بھی ورکر زندہ ہے اس مٹی پر قادنیوں کو مسلمان بناکر یا قادنیوں کو راستہ دینا یہ تو تم ہو اگر امریکہ خود بھی آجائے تو پھر قادنیوں کو مسلمان کوئی نہیں کہہ سکتا۔ انھوں نے کہا کہ دوسرے پارٹیوں کی ریاست کرسی، ممبر اور وزارت کیلئے ہوگی لیکن جمعیت العلمائے کی ریاست کی بنیاد اپنے نظرئے، دین اور حضورﷺ اور ختم نبوت کی حفاظت کیلئے ہوگی۔اور ختم نبوت پر جان بھی قربان کریں گے۔ اس موقع پر سابقہ ویلیج ناظم ا ورمشرف کے آل مسلم لیگ کے رہنماء انور علی نے ساتھیوں سمیت جے یو آئی ف میں شمولیت اختیار کیا۔ جلسے میں صوبائی جنرل سیکریٹری عطاء الحق درویش، ضلعی آمیر مولانا گوہر شاہ، حاجی دانشمند اور تحصیل شبقدر کے آمیر مولاناشمس الحق ودیگر موجود تھے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -