بیلجیم میں مزدوروں کی قلت 15سالہ تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی

بیلجیم میں مزدوروں کی قلت 15سالہ تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی
بیلجیم میں مزدوروں کی قلت 15سالہ تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی

  

برسلز(محمد عاطف حسین )بیلجیم میں مین پاورگروپ نے کہا ہے کہ موسم گرما میں ملازمتیں تیزی سے بڑھیں گی لیکن 83فیصد ملازمین کو اپنی آسا میاں پُر کرنا مشکل لگ رہا ہے ،کورونا وائرس کی وبا نے پورے بیلجیم میں مزدوروں کی اتنی قلت پیدا کردی ہے کہ گزشتہ پندرہ سالوں میں مزدوروں کی تعداد میں اتنی کمی نہیں آئی۔

مین پاور گروپ کے سروے کے مطابق اگرچہ ملازمت کے مواقع پیدا کرنے کی سطح بہت زیادہ ہے اور آجروں کا کہنا ہے کہ وہ نئے کارکنان لانے کے خواہشمند ہیں تاہم 83فیصد ملازمین کو خالی آسامیاں پُر کرنے میں دشواری کا سامنا ہے ۔تحقیق کے مطابق گرمی کے مہینوں میں بیلجیم کے آجروں کی خدمات حاصل کرنے کے ارادے حوصلہ افزاہیں،اپریل کے آخر میں سروے کیے گئے 567 آجروں میں سے 25فیصد ستمبر کے آخر تک اپنی افرادی قوت میں اضافہ کریں گے ، جبکہ 11فیصد اس کو کم کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔آجروں کی جانب سے ملازمتوں میں اضافے کی خواہش کے باوجود بیلجیم میں مزدوروں کی قلت 15سالہ تاریخ میں بلند ترین سطح پر ہے ،83فیصد ملازمین کو آسامیاں پر کرنے میں مشکلات کا سامنا ہے اور یہ تعداد 2019کے مقابلے میں چوبیس فیصد زیاد ہ ہے ۔مین پاور گروپ کے رکن لیکروکس نے کہا ہے کہ لیبر مارکیٹ کو ہنگامی بنیادوں پر فعال بنانے کی ضرورت ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ نوکری تلاش کرنے والوں کے لیے بہتر ایکٹیویشن پالیسی اور تعلیم و تربیت میں بہتری کے بغیر کمپنیوں کو اپنے عہدوں کو پر کرنے میں دشواری کا سامنا کرنا پڑے گا۔ 

مزید :

بین الاقوامی -