چیف جسٹس کی مدت آرمی چیف کے مساوی تین سال مقرر کرنے کی تجویز

چیف جسٹس کی مدت آرمی چیف کے مساوی تین سال مقرر کرنے کی تجویز
چیف جسٹس کی مدت آرمی چیف کے مساوی تین سال مقرر کرنے کی تجویز

  

لاہور( نامہ نگار خصوصی) اعلیٰ عدلیہ میں ججوں کے تقرر کے حوالے سے آئینی ترامیم کی تیاری کے لئے قائم سینیٹ کی کمیٹی نے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کی مدت بھی آرمی چیف کی طرح تین سال مقرر کرنے کی تجویز پیش کردی ہے ۔ذرائع کے مطابق آئین کے آرٹیکل 175میں جو ترامیم تجویز کی گئی ہیں ان میں کہا گیا ہے کہ جو ڈیشل کمیشن اعلیٰ میں ججوں کے تقرر کے لئے سادہ اکثریت کی بجائے دو تہائی اکثریت سے فیصلے کرے۔ ےہ آئینی ترمیم بھی تجویز کی گئی ہے کہ ہائی کورٹس کے چیف جسٹس کے لئے نامزدگیوں کا چیف جسٹس پاکستان کا اختیار ختم کردیا جائے اور ہائی کورٹ کے سنئیر ترین جج کو لازمی طور پر متعلقہ ہائی کورٹ کا چیف جسٹس مقرر ہونے کا مستحق قرار دیا جائے جبکہ ہائی کورٹ میں نئے ججوں کے تقرر کیلئے متعلقہ چیف جسٹس پر اسی ہائی کورٹ کے دو سنئیر ترین ججوں سے مشاورت لازمی قرار دی جائے ۔کمیٹی نے ےہ ترمیم بھی تجویز کی ہے کہ ججوں کے تقرر کے حوالے سے پارلیمانی کمیٹی تین چوتھائی اکثریت سے جوڈیشل کمیشن کی نامزدگیاں مسترد کر سکتی ہے تاہم اسے اس کے لئے ٹھوس وجوہات دینا ہوں گی ۔کمیٹی کے اجلاس میں ےہ تجویز مسترد کر دی گئی کہ جوڈیشل کمیشن میں شامل وکلاءنمایندوں کو بھی ججوں کا نام تجویز کرنے کا اختیار ہونا چاہئے ۔ذرائع کے مطابق ےہ تجویز اس بنیاد پر مسترد کر دی گئی کہ وکلاءمیں دھڑا بندےاں موجود ہیں جس کے باعث ان کی نامزدگیوں پر حرف آ سکتا ہے ۔ فاروق ایچ نائیک کی سربراہی میں کمیٹی کے اجلاس میں ایم این اے بشیر ورک ‘ سینیٹر زرفیق رجوانہ اورحاجی عدیل کے علاوہ وکلاءکی بار کونسلوں کے نمایندوں اور لاہور ہائی کورٹ بار کے صدر شفقت محمود چوہان شریک ہوئے ۔

مزید : قومی