مڈل ایسٹ میں افرادی قوت بھیج کر 5ارب ڈالرزرمبادلہ حاصل ہوسکتاہے

مڈل ایسٹ میں افرادی قوت بھیج کر 5ارب ڈالرزرمبادلہ حاصل ہوسکتاہے

لاہور ( وقائع نگار)پاکستان مڈل ایسٹ میں2020 اور2022میں فیفا ورلڈ کپ اور ورلڈ ایکسپو میں ڈیمانڈ کے مطابق افرادی قوت بھیج کر سالانہ5 ارب ڈالر زرمبادلہ کما سکتا ہے ،جسکے لئے درکار افرادی قوت کے حصول کا ہدف بھارت، فلپائن اور بنگلہ دیش سے کیا جائے گا ، پاکستا ن فوری طور پر دبئی اور قطر کی حکومتوں سے پاکستان افرادی قوت کو بھیجنے کے لئے مذاکرات کا سلسلہ شروع کرے ، حکومت انرجی بحران پر قابو پانے کے لئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کرے، ان خیالات کا اظہار پاکستان ہارڈ وئیر ایسو سی ایشن کی ایف بی آر وکسٹم کمیٹی کے چیرمین شیخ عبد المنان نے میڈیاسے خصوصی گفتگو کرتے ہو ئے کیا ، انہوں نے کہا کہ ملک میں موجودہ زر مبادلہ کا گراف بیرونی قرضوں اور سکوک کی بانڈ فروخت کے باعث بڑھ گیا ہے۔

لیکن اگر پاکستان زیادہ سے زیادہ افرادی قوت کو مڈل ایسٹ سمیت دیگر ملکوں میں بھیج کر نہ صرف انکے بھیجی ہوئی رقوم سے ملک میں زرمبادلہ کے گراف میں حقیقی اضافہ ہو گا بلکہ بے روز گاری کی شرح میں کمی کے ساتھ ساتھ عام شہریوں کے طرز زندگی بھی بلند ہو گا ، انہوں نے کہا کہ ایک اندازے کے مطابق پاکستان قطر اور دبئی میں ہونے والے میگا ایونٹ میں 5لاکھ افراد کو مڈل ایسٹ بھیج کر سالانہ آمدنی میں اضافہ کر سکتا ہے لہذا حکومت کو اس گولڈن موقع کو ہاتھ نہیں جانے دینا چاہیے اور فوری طور دفتر خارجہ کو اس ہدف کے حصول کے لئے متحرک ہو جانا چاہیے ، انہوں نے کہا کہ اسوقت پاکستان میں انرجی بحران کی وجہ سے انڈسٹری بری طرح متاثر ہو رہی ہے ، انہوں نے کہا کہ انڈسٹری بارے پالیسی تشکیل دینے سے قبل متعلقہ انڈسٹری کے سٹیک ہولڈرز کو عتماد میں لیا جائے ، انہوں نے کہا کہ پاکستان میں اینجرنگ کے شعبہ میں ترقی کے کی بہت گنجائش ہے اگر حکومت ٹیکسٹائل کی طرح اس انڈسٹری کی ڈویلپمنٹ کے لئے پالیسی تشکیل دے تو اس شعبے میں ٹیکسٹال سے زیادہ ایکسپورٹ کی گنجائش موجود ہے ، انہوں نے کہا کہ حکومت بجلی کو پیدا کرنے کے لئے زیادہ سے زیادہ انحصار ہائیڈل پر کرے کیونکہ اسوقت دنیا میں سستی بجلی کی ضرورت ہے کیونکہ مہنگی انرجی سے پیداواری لاگت میں اضافہ سے عالمی مارکیٹ میں قیمتوں کے حوالے سے مقابلہ نہیں کیا جاسکتا

مزید : کامرس


loading...