رواں سیزن میں کینو کا برآمدی ہدف پورا نہیں کیا جاسکا:برآمدکنندگان

رواں سیزن میں کینو کا برآمدی ہدف پورا نہیں کیا جاسکا:برآمدکنندگان

فیصل آباد (بیورورپورٹ) پاکستان سٹرس فروٹ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے ترجمان نے کہاہے کہ ملک کے مخصوص کاروباری حالات اور بعض بین الاقوامی وجوہات ، دہشت گردی کے چند واقعات ، ایکسپورٹ کے ضمن میں سخت شرائط کے باعث وسطی ریاستوں ، عرب ممالک ، افغانستان ، ایران و دیگر ممالک کورواں سیزن کے دوران ہدف کے مطابق کینو برآمد نہیں کیاجاسکا جبکہ اگر فوری مناسب پلاننگ نہ کی گئی تو آم کی برآمد میں بھی فروٹ ایکسپورٹرز کو اربوں روپے کا نقصان پہنچنے کااحتمال ہے۔ میڈیاسے بات چیت کے دوران انہوں نے کہاکہ ایک طرف متعلقہ اداروں کی بار بار یقین دہانیوں کے باوجود ترشاوہ پھلوں سمیت دیگر اقسام کے فروٹس کی گریڈنگ ، پالشنگ ، پیکنگ ، ایکسپورٹ میں درپیش رکاوٹوں کے خاتمہ کیلئے کوئی خاطر خواہ اقدامات نہ کئے گئے ہیں۔

جبکہ دوسری جانب نئی بین الاقوامی منڈیوں کی تلاش میں بھی سست روی کامظاہرہ کیا جارہاہے ۔ انہوں نے کہاکہ متعلقہ اداروں کی عدم دلچسپی سے کینوکے درآمد کنندگان کو اربوں روپے کا نقصان برداشت کرنا پڑاہے لہٰذا ضرورت اس امر کی ہے کہ آم کی زیادہ سے زیادہ پیداوار برآمد کرنے کیلئے اگر ابھی سے مناسب پلاننگ نہ کی گئی تو باغبانوں سمیت فروٹ برآمد کنندگان کو مزید اربوں روپے کانقصان برداشت کرناپڑے گا۔ انہوں نے کہاکہ سرکاری و غیر سرکاری طور پر کینو کی زیادہ مقدار وسطی ریاستوں ، عرب ممالک ، بعض یورپین کنٹریز ، افغانستان ، ایران کو ایکسپورٹ کی جاتی تھی مگر دہشت گردی کے خلاف اقدامات کی آڑ میں رواں سال وسطی ریاستوں کو مطلوبہ ہدف کے مطابق کینو کی ایکسپورٹ نہ ہو سکی ہے جس کے باعث باغبانوں ، زمینداروں ، بیوپاریوں اور برآمدکنندگان کو ان کی اصل قیمت بھی نہ مل سکی ہے۔ انہوں نے توقع ظاہر کی کہ حکومت آم کی زیادہ سے زیادہ برآمد کو یقینی بنانے کیلئے پیشگی مؤثر اقدامات کرے گی تاکہ ملک کیلئے زیادہ سے زیادہ زرمبادلہ کاحصول ممکن ہو سکے۔(fd/jav/hab 1212:15)

مزید : کامرس