داعش کی بربریت کا اثر ، 10 سالہ عربی بچے کے ساتھ اپنے ساتھیوں نے وہ سلوک کیا کہ انسانیت کانپ جائے

داعش کی بربریت کا اثر ، 10 سالہ عربی بچے کے ساتھ اپنے ساتھیوں نے وہ سلوک کیا ...
داعش کی بربریت کا اثر ، 10 سالہ عربی بچے کے ساتھ اپنے ساتھیوں نے وہ سلوک کیا کہ انسانیت کانپ جائے

  


صنعاء(مانیٹرنگ ڈیسک) داعش کی طرف سے اردن کے پائلٹ کو زندہ جلائے جانے کے دلخراش واقعے نے جہاں ساری دنیا کو خوفناک نفسیاتی صدمے سے دوچار کیا وہیں بچوں کے معصوم ذہنوں پر بھی اس واقعے کے نہایت منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں اور یمن میں تو کچھ بچوں نے اس خوفناک واقع سے متاثر ہوکر اپنے ہی ایک ساتھی کو پنجرے میں بند کرکے زندہ جلادیا۔

چین کا درد ناک اور خوفناک میلہ

یمنی میڈیا کے مطابق الدحسات گاﺅں میں بچوں کے ایک گروہ نے لکڑی کا ایک پنجرہ تیار کیا اور اس میں ایک دس سالہ بچے کو قید کرکے اس کے اوپر تیل چھڑکا اور آگ لگا دی۔ مقامی صحافی محمد معظم نے ”گلف نیوز“ کو بتایا کہ بچے کی چیخیں بلند ہونے پر قریب موجود لوگوں نے بھاگ کر پنجرے کو توڑا اور اسے باہر نکالا۔ بچے کی ٹانگوں اور دھڑ پر جلنے سے شدید زکم آئے اور اسے فوری طور پر ہسپتال پہنچایا گیا جہاں اس کی حالت تشیوناک بتائی جاتی ہے۔

ماہرین سماجیات کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کے ظالمانہ واقعات کے مناظر میڈیا میں دیکھ کر اکثر بچے دہشت زدہ رہ جاتے ہیں لیکن ان میں سے کچھ ایسے ہی واقعات کو دہرانے کی کوشش بھی کرتے ہیں اور حالیہ واقعہ بھی اسی رویے کی ایک مثال ہے۔

مزید : انسانی حقوق


loading...