چھُٹی کے روز منچلوں نے پتنگ بازی پر پابندی کا ’’بوکاٹا‘‘ کر دیا، 25گرفتار

چھُٹی کے روز منچلوں نے پتنگ بازی پر پابندی کا ’’بوکاٹا‘‘ کر دیا، 25گرفتار

لاہور(اپنے نامہ نگار سے +وقائع نگار) پتنگ سازی اور پتنگ بازی کے خطرناک سلسلہ میں تیزی آ گئی اور بلخصوص اتوار یا کسی اور چھٹی کے روز اس خطرناک کھیل کا سلسلہ پورے دن جاری رہتا ہے ۔لاہور کے گنجان آباد علاقوں سمیت مضافاتی علاقوں میں پتنگ سازی کے سلسلہ نے اندر کھاتے زور پکڑ لیا ہے اس میں پتنگ بازوں نے ٹیلی فون سے اپنی مرضی کے گڈے ،پتنگیں اور ڈورتیار کروانے کے لیے آرڈر دینے کا سلسلہ شروع کررکھا ہے جس کی بنا پر پتنگ بازی کا سامان بڑے آرام سے ملنا شروع ہو گیا ہے اور اس میں اتوار یا کسی چھٹی کے روز دن بھر رنگ برنگ گڈوں اور پتنگوں سے آسمان بھر جانا معمول بن چکا ہے ۔گزشتہ روز بھی لاہور کے گنجان علاقوں کے ساتھ پوش علاقوں میں پتنگ بازی جاری رہی جس پر ضلعی حکومت اور پولیس کی ٹیموں کے درمیان آنکھ مچولی کا سلسلہ جاری رہا اور پولیس کی ٹیموں نے پتنگ بازوں کے خلاف آپریشن کر کے 25پتنگ بازوں کو گرفتار کر لیا ہے جس میں ایس ایچ او غازی آباد عتیق ڈوگر کی نگرانی میں پولیس ٹیم نے چھاپے مار کر تین پتنگ بازوں کو پکڑ کر مقدمات درج کیے اس طرح گجر پورہ پولیس ،قلعہ گجر سنگھ اور گلشن راوی سمیت کوٹ لکھپت پولیس نے بھی دو دو پتنگ بازوں کو گرفتار کیا ہے جبکہ باغبانپورہ پولیس اور ہر بنس پورہ پولیس نے بھی دو دو پتنگ بازوں کو پکڑ کر مقدمات درج کیے ہیں اسی طرح شہر کے دیگر علاقوں میں بھی پتنگ باز گرفتار کیے گئے ۔دوسری جانب پتنگ بازی مخالف تنظیموں کے عہدیداروں راو محمد اکرم خان ،اکرم اللہ کاکڑ ،،شیخ امین قادی اور دیگر نے کہا ہے کہ حکومت پتنگ بازوں اور بنانے والوں کو گرفتار کر کے یہ سلسلہ ختم کروائے ورنہ صوبائی سطح پر احتجاج کا سلسلہ شروع کیا جائے گا۔

مزید : صفحہ آخر