ناقص پالیسیوں کے باعث زراعت کا شعبہ بد حالی کا شکار ہے،میاں مقصود

ناقص پالیسیوں کے باعث زراعت کا شعبہ بد حالی کا شکار ہے،میاں مقصود

لاہور(جنرل رپورٹر)امیرجماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدنے کہاہے کہ پاکستان ایک زرعی ملک ہے۔ناقص پالیسیوں کی وجہ سے ہمارا زراعت کا اہم شعبہ اس وقت دگرگوں اور بدترین صورتحال سے دوچار ہے۔افسوس ناک امر یہ ہے کہ زرعی طور پر خود کفیل پاکستان میں کسان دن بدن بدحال ہوتا جارہا ہے۔ پورے پاکستان کے لئے خوراک پیدا کرنے والا کسان آج دو وقت کی روٹی کے لئے ترس رہا ہے۔حکومت کی کسان دشمن پالیسیوں کی وجہ سے کاشتکارمعاشی بدحالی کاشکار ہورہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ حکومت کی طرف سے فصلوں کی کم قیمت مقررکرنے سے کسانوں کوان کی فصلوں کاجائزمنافع ملناتودور کی بات لاگت بھی پوری نہیں ہوتی۔اونے پونے نرخوں پرفصلیں بیچنے کے باعث کاشتکار انتہائی افسردہ دکھائی دیتا ہے۔لوگ کپاس اور گندم کی بوائی کوچھوڑکرچھوٹی فصلیں کاشت کرنے پرمجبور ہیں اگر یہی حالات رہے تو ملک میں زرعی شعبے کو زبردست نقصان اور خوراک کی ضروریات کوپوراکرنا ممکن نہیں ہوگا۔انہوں نے کہاکہ ہماری جی ڈی پی میں ز ر ا عت کاحصہ55.60فیصد،لائیوسٹاک کا حصہ 11.80 فیصد جبکہ67.435ملین دیہی آبادی لا ئیو سٹاک کے شعبے سے منسلک ہے۔بدقسمتی سے حکومت وقت کی جانب سے لائیوسٹاک کی پیداوار میں اضا فے ، غربت کے خاتمے اور دیہی ترقی کے لئے زبانی جمع خرچ کے سواکچھ نہیں کررہی۔اس حوالے سے ملک کا سب سے زیادہ زرخیز حصہ جنوبی پنجاب حکمرانوں کی عدم توجہی کاشکارہے۔وہاں کے لوگوں کوصحت کی بنیادی سہولیات تک میسر نہیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 1