سرکاری نرخ پر دودھ فروخت نہ کر نے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن

سرکاری نرخ پر دودھ فروخت نہ کر نے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن

کراچی (اسٹاف رپورٹر) کراچی انتظامیہ کا سرکاری نرخ پر دودھ فروخت نہ کر نے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن جاری ہے ۔ کمشنر کراچی آصف حیدر شاہ نے کہا ہے کہ دودھ کی قیمتیں تاجروں اور دکانداروں کے نمائندوں کی مرضی سے مقرر کی گئی ہیں۔ دودھ کی سرکاری قیمت کے نفاذ کو یقینی بنایا جا ئے گا۔ جو خلاف ورزی کرے گا اس کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے گی۔ صارفین اپنی شکایت 1299 پر درج کرائیں کارروائی کی جائے گی۔پریس ریلیز کے مطابق جمعہ اور ہفتہ کو دو روز کے دوران کراچی کے مختلف اضلاع میں ضلعی انتظامیہ کے مجسٹریٹس نے دودھ فروشوں کے خلاف کارروائی کر کے 44 دودھ فروشوں کو گرفتار کرلیا ۔ جمعہ کو سا ت دودھ فروش گرفتار کئے گئے جبکہ ہفتہ کو 37 دودھ فروش کو گرفتار کیا گیا ۔تفصیلات کے مطابق ہفتہ کو ضلع جنوبی میں دو افراد ،ضلع وسطی میں اٹھارہ ، کورنگی میں آٹھ اور ضلع غربی میں نو دودھ فروشوں کو گرفتار کیا گیا۔ ہفتہ کو مجموعی طور پر دو لاکھ 77 ہزار روپے جرمانہ کیا گیا۔ جمعہ کی تفصیلات کے مطابق کورنگی میں انتظامیہ نے کارروائی کر کے چار دو دھ فروشوں کو گرفتار کیا ضلع غربی میں تین دودھ فروشوں کی گرفتاری عمل میں آئی ضلع جنوبی میں نو دودھ فروشوں کے خلاف کاررائی کی گئی ان پر ایک لاکھ پچاسی ہزار روپے جرمانہ کیا گیا۔کمشنر کراچی نے واضح کیا ہے کہ زائد قیمت پر دودھ کی فروخت کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ شہرمیں 85 سے نوے روپے فی لیٹر تک دودھ فروخت ہو رہا تھا ۔ جو غیر قانونی اور مفاد عامہ کے خلاف تھا ۔ انتظامیہ نے ڈیری فارمر اور ہول سیل کی سطح کی قیمت بھی مقر ر کی ہے جس کے مطابق فارمر ز کی قیمت 71 روپے فی لیٹر اور ہول سیل کی قیمت 75 روپے 35 پیسے فی لیٹر مقرر کی ہے جبکہ ریٹیل کی قیمت 80 روپے فی لیٹر پر عوام کو دودھ فروخت کیا جائے گا ڈیری فارمر ز اورہول سیل کی سطح کی دودھ کی قیمت کو بھی موثر طور پر نافذ کیا جا ئے گا۔

مزید : کراچی صفحہ اول