غیرت کے نام پر قتل جوڑے کے ملزم کی سزا کالعدم

غیرت کے نام پر قتل جوڑے کے ملزم کی سزا کالعدم

پشاور(نیوزرپورٹر) پشاور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس وقار احمد سیٹھ اورجسٹس اشتیا ق ابراہیم پر مشتمل دورکنی بنچ نے غیر ت کے نام پراہلیہ سمیت غیر مرد کو قتل کرنے پر 50سال قید اور چار لاکھ روپے جرمانہ پانے ملزم کی اپیل منظور کرتے ہوئے سزا کالعدم قرار دے دی۔ ملزم کی جانب سے اشفاق آفرید ی ایڈوکیٹ نے اپیل کی پیروی کی ، استغاثہ کے مطابق ملزم محمد علی سکنہ گاوں گلہ صوابی پر الزام ہے کہ اس نے تھانہ ٹوپی کے حدود میں 25ستمبر 2014کواپنی اہلیہ گل معدہ اور اسکے مبینہ آشنا حمزہ کو اپنے گھر میں قتل کردیا تھا، جس پر ماتحت عدالت نے ملزم پر الزام ثابت ہونے پر دو مرتبہ عمر قید اور چار لاکھ روپے جرمانے کی سزا سنائی تھی، جس کے خلاف ملزم نے پشاور ہائیکور ٹ میں اپیل دائر کی ، اس موقع پر ملزم کے وکیل نے دلائل میں عدالت کو بتایاکہ مقدمہ ہذا میں ملزم خود مدعی تھااور اس کے لئے اقبال جرم کاجو طریقہ کا راپنایا گیا ہے ، اس میں قانونی سقم پایا جاتاہے اور نہ ہی اس قتل کا کوئی چشم دید گواہ موجود ہے۔ لہذا ملزم کی سزا کو کالعدم قرار دیا جائے، فاضل بنچ نے ابتدائی دلائل سننے کے بعد ملزم کی سزا کالعدم قرار دے دی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر