کیاغربت کے باعث دیت ادا نہ کرنے والا غیرمعینہ مدت تک قیدرکھا جاسکتا ہے ؟،سپریم کورٹ نے اہم قانونی نکتہ کی تشریح کیلئے وزارت مذہبی امور اوراٹارنی جنرل نوٹسز جاری کردیئے

کیاغربت کے باعث دیت ادا نہ کرنے والا غیرمعینہ مدت تک قیدرکھا جاسکتا ہے ...
کیاغربت کے باعث دیت ادا نہ کرنے والا غیرمعینہ مدت تک قیدرکھا جاسکتا ہے ؟،سپریم کورٹ نے اہم قانونی نکتہ کی تشریح کیلئے وزارت مذہبی امور اوراٹارنی جنرل نوٹسز جاری کردیئے

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ نے قتل کیس میں اہم قانونی سوالات اٹھا دیئے ۔کیادیت کی رقم مقرر کرتے وقت ملزم کے مالی حالات مدنظر نہیں رکھے جاتے ؟،سپریم کورٹ نے اہم قانونی نقطے کی تشریح کیلئے وزارت مذہبی امور،اٹارنی جنرل اور ایڈووکیٹ جنرل پنجاب سمیت دیگر کو نوٹسز جاری کردیئے ۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق سپریم کورٹ میں قتل کیس کی سماعت کے دوران جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے اہم سوالات اٹھا دیئے،فیصلے میں کہا گیا ہے کہ کیاغربت کے باعث دیت ادا نہ کرنے والا غیرمعینہ مدت تک قیدرکھا جاسکتا ہے ؟،کیادیت کی عدم ادائیگی پر غیر معینہ مدت قید قرآن و سنت کے مطابق ہو گی؟،دیت کیلئے حکومت نے 30 ہزار630 گرام چاندی کے برابر رقم مقرر کررکھی ہے ،تعزیرات پاکستان کے تحت وفاق ملزم کے مالی حالات سامنے رکھنے کا پابندہے ۔سپریم کورٹ نے اہم قانونی نکتہ کی تشریح کیلئے وزارت مذہبی امور اوراٹارنی جنرل نوٹسز جاری کردیئے ۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد