نیند نہ آنے کی بیماری میں مبتلا بچوں کی تعداد میں ہوشربا اضافہ، انتہائی افسوسناک وجہ بھی سامنے آگئی

نیند نہ آنے کی بیماری میں مبتلا بچوں کی تعداد میں ہوشربا اضافہ، انتہائی ...
نیند نہ آنے کی بیماری میں مبتلا بچوں کی تعداد میں ہوشربا اضافہ، انتہائی افسوسناک وجہ بھی سامنے آگئی

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ماہرین نے بچوں میں نیند نہ آنے کی بیماری ہوشربا شرح سے بڑھنے کا انکشاف کیا ہے اوراس کی انتہائی افسوسناک وجہ بھی بتا دی ہے۔ میل آن لائن کے مطابق برطانوی ماہرین نے بتایا ہے کہ برطانیہ کے بچوں میں نیند نہ آنے کی بیماری (Insomnia)کی شرح میں 70فیصد اضافہ ہو چکا ہے جس کی وجہ سے بچے صحت کے مختلف مسائل کا تیزی سے شکار ہو رہے ہیں۔

ماہرین کا کہنا تھا کہ ”بچوں میں یہ بیماری بڑھنے کی سب سے بڑی وجہ سوشل میڈیا ہے۔ اس کی وجہ سے بچے مختلف ذہنی عارضوں کا شکار ہو رہے ہیں جن میں بے خوابی کی بیماری سب سے زیادہ تیزی سے پھیل رہی ہے۔ اسی وجہ سے بچوں میں موٹاپے کی شرح بھی بڑھ رہی ہے۔ “ این ایچ ایس کے ماہرین نے بتایا ہے کہ ”بے خوابی کے 16سال سے کم عمر مریضوں کی تعداد میں اضافہ 2012ءکے بعد شروع ہوا ہے۔ 2012-13ءمیں بے خوابی کے مریض بچوں کی تعداد 6ہزار 549تھی جو 2018-19ءمیں بڑھ کر 11ہزار 313ہو گئی۔“ یہی وہ دورانیہ ہے جس میں سوشل میڈیا عام ہوا ہے اور سمارٹ فونز آنے سے ہر شخص کی انٹرنیٹ تک آسان رسائی ہوئی ہے۔

مزید : تعلیم و صحت