شہید باپ کا شہید بیٹا، راولپنڈی میں شہید ہونے والے پولیس انسپکٹر کی داستان سن کر آپ کی آنکھوں میں بھی آنسو آجائیں

شہید باپ کا شہید بیٹا، راولپنڈی میں شہید ہونے والے پولیس انسپکٹر کی داستان ...
شہید باپ کا شہید بیٹا، راولپنڈی میں شہید ہونے والے پولیس انسپکٹر کی داستان سن کر آپ کی آنکھوں میں بھی آنسو آجائیں

  

راولپنڈی(ڈیلی پاکستان آن لائن)ٹارگٹ کلنگ کے واقعہ میں شہید ہونے والے پولیس انسپکٹر عمران عباس کے والد محمد عباس 20 سال قبل پولیس مقابلے کے دوران شہید ہوئے تھے۔

اپنی شہادت سے کچھ عرصہ قبل دئیے گئے انٹرویو میں عمران عباس کا کہنا تھا کہ ان کی فیملی کا تعلق پاکپتن سے ہے مگر والد کی شہادت کے بعد میری والد ہ نے بہادرانہ فیصلہ کیا اور وہ واپس گاؤں نہیں گئی بلکہ انہوں نے ہم کو پڑھایا، اپنے والد کی شہادت کے وقت میری عمر 10 سال تھی۔ عمران عباس کے والد سب انسپکٹر محمد عباس ایک پولیس مقابلے کے دوران شہید ہوئے تھے۔

عمران عباس محکمہ پولیس میں بطور اے ایس آئی بھرتی ہوئے اور محکمانہ ترقی پاتے ہوئے کچھ عرصہ قبل انسپکٹر کے عہدے پر فائض ہوئے۔ وہ متعدد تھانوں میں ایس ایچ او رہ چکے تھے۔ عمران عباس راولپنڈی ٹریفک پولیس کے پی آر او بھی رہے۔ پولیس شہدا کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے کچھ عرصہ قبل آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ انسپکٹر عمران عباس کے گھر بھی گئے تھے اور انہوں نے شہید محمد عباس کی اہلیہ سے ملاقات بھی کی تھی۔

عمران عباس  نے سوگواران میں دو بچے اور بیوہ کو چھوڑا ہے۔ عمران عباس کو گھومنے پھرنے کا شوق تھا۔

مزید :

قومی -