پاکستان کو ایف 16طیارے فروخت کیلئے کانگریس سے فنڈز کے حصول کی کوشش جاری

پاکستان کو ایف 16طیارے فروخت کیلئے کانگریس سے فنڈز کے حصول کی کوشش جاری

 واشنگٹن (اظہر زمان، بیوروچیف) امریکی حکومت پاکستان کو آٹھ ایف سولہ طیاروں کی فروخت کیلئے کانگریس سے فنڈ کے حصول کے لئے اپنی کوشش جاری رکھے ہوئے ہے، کیونکہ وہ سمجھتی ہے کہ پاکستان کو انسداد دہشت گردی اور شمالی علاقے میں شورش کو ختم کرنے کے آپریشنز کیلئے ان طیاروں کی شدید ضرورت ہے۔ یہ بیان امریکی وزارت خارجہ کے نائب ترجمان مارک ٹونر نے گزشتہ پریس بریفنگ کے دوران ایک سوال کے جواب میں دیا۔ ان سے سوال کیا گیا تھا کہ ایک روز پہلے ترجمان جان کربی نے کہا تھا کہ امریکہ پاکستان کے ساتھ تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے، لیکن جب پاکستان کو غیر ملکی فوجی امداد کی ضرورت ہوتی ہے تو کانگریس اسے روک دیتی ہے۔ اس لئے آپ کیا سمجھتے ہیں کہ کانگریس کا یہ اقدام انسداد دہشت گردی کی کوششوں اور دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کو کتنا متاثر کر رہا ہے۔امریکی نائب ترجمان نے مزید بتایا کہ یقیناً ایف سولہ طیارے اس قسم کے آپریشنز میں بہت موثر ثابت ہوتے ہیں۔ ہمارے خیال میں ان سے بعض انتہا پسند گروہوں کی صلاحیت کم کرنے میں بہت مدد ملتی ہے۔ اگر ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان کے شمالی علاقے میں دہشت گردوں کی محفوظ پناہ گاہوں کو ختم کیا جائے تو ان طیاروں کی پاکستان کو فراہمی بہت ضروری ہے۔ ان پناہ گاہوں میں وہ مقامات بھی شامل ہیں جہاں سے دہشت گرد افغانستان کے اندر شورش کی مدد کے لئے حملے کرتے ہیں۔نائب ترجمان مارک ٹونر کا کہنا تھا کہ پاکستان کی سرزمین پر ان دہشت گردوں کے قبضے کو ختم کرنے میں ظاہر ہے پاکستان کا اپنا مفاد ہے، لیکن یہ افغانستان سمیت پورے خطے کے اجتماعی مفاد میں بھی ہے۔ تاہم کانگریس کے بعض ارکان نے فارن ملٹری فنانسنگ کا فنڈ ان طیاروں کی فروخت میں استعمال کرنے پر اعتراض کیا ہے۔ اس لئے جان کربی نے پاکستان کو اپنے وسائل سے ان طیاروں کی قیمت ادا کرنے کا انتظام کرنے کا جو مشورہ دیا تھا، وہ یہ طیارے حاصل کرنے کی ایک آپشن ہے۔ جب ترجمان سے مزید پوچھا گیا کہ اگر انتظامیہ فنڈ فراہم کرنے کے حق میں ہے تو کیا صدر اوبامہ یا وزیر خارجہ جان کیری اس سلسلے میں ایگزیکٹو آرڈر کے ذریعے کانگریس کے فیصلے کو ویٹو کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں؟ اس سوال کا براہ راست جواب دینے سے احتراز کرتے ہوئے نائب ترجمان نے صرف یہ واضح کیا کہ امریکی نظام میں خزانے پر سارا کنٹرول کانگریس کا ہوتا ہے۔

مزید : صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...