من پسند پوسٹوں پر تعینات وارڈن رقم بنانے میں مصروف، ٹریفک جام معمول بن گیا

من پسند پوسٹوں پر تعینات وارڈن رقم بنانے میں مصروف، ٹریفک جام معمول بن گیا

لاہور(رپورٹ۔محمد یو نس با ٹھ) صوبائی دارالحکومت میں یکم مئی سے غیر نمونہ اور ممنوعہ نمبر پلیٹ والی گاڑیوں کے خلاف کریک ڈاؤن کا اعلان کیا گیا تھا جس کے تحت 28 ہزار سے زائد گاڑیوں کو بند کرنے کی وارننگ بھی دی گئی ۔ٹریفک پولیس کی غفلت ،لاپرواہی اور سستی کے باعث اس منصوبہ پر کام کا آغاز ہی نہیں کیا گیا اور ٹریفک وارڈن نے سسٹم کی طرف توجہ دینے کی بجائے مبینہ طور پر دیہاڑیاں لگانا شروع کر دی ہیں شہر میں ٹریفک کا جام رہنا معمول بن گیا ہے جبکہ ٹریفک اہلکارسارادن شکار کی تلاش میں رہتے ہیں اور اشاروں سے کوسو ں دور کھڑے ہو کر خلاف ورزی کا بہانہ بنا کر شہریوں کو روک کر چالان کی دھمکی دیکر ان سے مبینہ طور پر رشوت وصول کرتے ہیں ۔ اکثر علاقوں میں ایمبولینس ٹریفک میں پھنس جانے سے مریض ہسپتال پہنچنے سے قبل ہی دم توڑ جاتے ہیں جبکہ ٹریفک اہلکار من پسند جگہوں پر تعیناتیاں حاصل کرنے کے لیے مبینہ طور پر رشوت کا سہارا لیتے ہیں اورتعیناتی کے بعد جی بھر کر پیسے کماتے ہیں ۔دن کے وقت شہر میں ہیوی ٹریفک کا داخلہ بند ہونے کے باوجود ٹریفک اہلکار ڈرائیوروں سے مبینہ طور پر رشوت لیکر انہیں شہر میں داخل ہونے کی اجازت دیتے ہیں ۔شہر کے اکثر علاقوں با لخصوص بند روڈ پر ریفلیکٹر موجود نہ ہونے کی وجہ سے حادثات کی شرح میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے ہر وقت کوئی نہ کوئی گاڑی گرین بیلٹ پر ر یفلیکٹر نہ ہونے کی وجہ سے اس پر چڑھ دوڑتی ہے جس سے گاڑی سواروں کو سخت اذیت سے دوچار ہونا پڑتا ہے بعض اوقات تو اندھیرے کے باعث کئی ڈرائیور گرین بیلٹ سے گاڑی نیچے نہ آنے کے خوف سے اسے وہیں لاک کر کے دن چڑھنے کے انتظار میں گا ڑی میں سو جاتے ہیں ۔آئی جی پولیس پنجاب نے شہر میں کیمروں کی مدد سے ٹریفک جرمانوں کی منظوری اور کم عمر بچوں کی ڈرائیونگ پر جرمانہ بڑھانے کا فیصلہ کیا تھا جس پر عمل درآمد نہ ہونے کی وجہ سے سی ٹی او کی سخت سرزنش کی ہے اور سسٹم کو فوری لاگو کرنے کا بھی حکم دیا ہے ۔جبکہ شہر میں ٹریفک کے جا م ہو نے پر بھی لا ہور پو لیس سے رپو رٹ ما نگ لی گئی ہے اور زمہ دارو ں کے خلا ف کا رروائی کی بھی ہدا یت کی گئی ہے ۔ تا ہم لا ہور پو لیس کے مطا بق ٹر یفک کا نظا م تر قیا تی کا مو ں کی وجہ سے خراب ہو ا ہے ۔با خبر زرائع سے معلو م ہواہے کہ صو با ئی کا بینہ کمیٹی برائے لا اینڈآڈر نے ڈیلروہیکلزرجسٹریشن سسٹم اور ٹر یفک قوانین کی خلا ف ورز ی پر کیمر ے کے زریعے جر ما نے کی منظور ی دی تھی ۔وزیر قا نو ن رانا ثنائاللہ کی زیر صدارت خصوصی اجلاس کے دورا ن مو ٹر سا ئیکل سواری کے دوران ٹر یفک قوانین کی خلا ف ورز ی پرجر ما نو ں کی شر ح میں 100روپے اضافے اور کم عمر بچو ں کے ڈرائیو نگ کر نے پرجر ما نہ 300سے بڑھا کر 500روپے کر نے کی بھی منطو ر ی دی گئی تھی۔را نا ثنا ء اللہ نے کہا کہ ٹر یفک قوا نین کی خلا ف ورز ی پرجر ما نو ں کی ادائیگی کے لیے بہتر میکنز م بھی وضع کیا گیا ہے ۔ایس ایم یو لا ء اینڈآرڈر کے سنئیر ممبر سلما ن صو فی نے گا ڑی کی ٹرا نسفر یا ٹو کن ٹیکس کی ادائیگی کے وقت ٹر یفک جر ما نو ں کی تجو یز بھی پیش کی تھی۔تا ہم آئی جی پو لیس پنجا ب مشتاق احمد سکھیرا نے لا ئسنس پلیٹس میں آر ایف آئی ڈی میں چپ نصب کر نے کی تجویز دی تھی۔جر ما نو ں کی عد م ادائیگی کا سراغ لگا نے کے لیے مختلف مقا ما ت پر ریڈ یو فر یکوئنسی شنا ختی ڈیوائس کے ریڈر نصب کر نے اور عد م ادائیگی کی صورت میں گا ڑی کو روک کر ما لکا ن سے جر ما نہ ادا کروانے کی بھی تجا ویز زیر بحث آئی تھیں۔سلما ن صو فی نے یہ بھی کہا تھا کہ ڈیلر وہیکلز سسٹم کے نفا ز کے بعد سڑ کو ں پر آنیوا لی اپلا ئیڈ فار گا ڑیو ں کو تحو یل میں لینے کا بھی فیصلہ کیا گیا تھا ۔ان کے مطا بق کہ لا ئسنس پلیٹ گا ڑی کے ما لک کی شنا خت کے طور پر استما ل کی جا ئے گی اور ٹر یفک قوانین کی خلا ف ورز ی پر ہو نے وا لے جر ما نے براہ راست لا ئسنس پلیٹ سے منسلک ہو نگے۔اس کے بعد کا بینہ کمیٹی نے منظور ی بھی دے دی تھی جبکہ ٹر یفک پو لیس نے یکم مئی سے غیر نمو نہ اور ممنو عہ گا ڑیو ں کے خلا ف کا رروائی کر تے ہوئے 28ہزار سے زائد گا ڑیو ں کو بند کر نے کا اعلا ن کیا تھا جو کہ ٹر یفک پو لیس کی نا قص حکمت عملی کے با عث یہ منصو بہ شروع ہی نہیں کیا گیا ۔ جبکہ آئی جی پو لیس نے شہر میں ٹریفک کے جا م ہو نے پر بھی لا ہور پو لیس سے رپو رٹ ما نگ لی ہے اور زمہ دارو ں کے خلا ف کا رروائی کی بھی ہدا یت کی گئی ہے ۔ تا ہم لا ہور پو لیس کے مطا بق ٹر یفک کا نظا م تر قیا تی کا مو ں کی وجہ سے خراب ہو ا ہے ۔جن علا قو ں میں تر قیا تی کا م نہیں ہو رہے وہا ں ٹر یفک کا نظام درست ہے ۔

مزید : صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...