ایف آئی اے کی غفلت،چوٹی زیریں ہنڈی کے کاروبار کی جنت بننے لگا،کروڑوں روپے منتقل

ایف آئی اے کی غفلت،چوٹی زیریں ہنڈی کے کاروبار کی جنت بننے لگا،کروڑوں روپے ...

چوٹی زیریں(حبیب چنگوانی سے)ایف آئی اے کی کاروائی نہ ہونے سے چوٹی زیریں ہنڈی/ حوالہ کے کاروبار کا گڑھ بن گیا روزانہ (بقیہ نمبر30صفحہ12پر )

چار کروڑ سے بڑھ کر چھ کروڑ روپے کے لین دین کا انکشاف۔ حکومت کو ماہانہ لاکھوں کا نقصان۔ہنڈی مالکان کروڑُ پتی بن گئے ایف آئی اے منتھلی لے کر خاموش ۔چوٹی زیریں میں قائم ہنڈی کے کاروبار میں روزانہ چھ کروڑ روپے سے زائد بیرون ممالک سے پیسہ منتقل ہونے لگا اس غیر قانونی کاروبار میں ملوث افراد دیدہ دانستی اپنی شاپس پر کاروبار کرتے نظر آنے لگے۔جس سے حکومت کو ماہانہ لاکھوں روپے کا نقصان ہونے لگا۔ چوٹی شہرہنڈی کا گڑھ ہونے کی وجہ سے لوگ چوٹی بالا۔سخی سرور۔درخواست جمال خان۔ہیڈ زیرو۔خان پور۔پائیگاہ۔کوٹ چھٹہ۔مانہ احمدانی۔معموری۔پل 13 سے ہنڈی پر پیسے وصول کرنے آتے ہیں ۔ ہنڈی کا کاروبار عروج پر ہونے کی خوشی میں اب تو ہنڈی مالکان نے ہوم ڈیلیوری کی سہولت بھی متعارف کروا دی ہے۔ایک فون کال پر گھر بیٹھے اپنا ایڈریس بتائیں اور پیسے وصول کریں۔ ہنڈی والوں نے تین تین ملازم ہوم ڈیلیوری کے لیے رکھے ہوئے ہیں۔ٹی سی ایس کوریئر کمپنی سے بھی جلد اپنی سہولت متعارف کرو ا دی گئی ہے۔ ایف آئی اے حکام نے کچھ عرصہ پہلے ڈیرہ غازیخان ۔کوٹ چھٹہ۔پائیگاہ میں ہنڈی کے کاروبار میں ملوث افراد کے خلاف کاروائی کی جس کے نتیجہ میں چوٹی زیریں میں ایف آئی اے کی کاروائی نہ ہونے کی وجہ سے دور دراز سے بھی لوگوں نے چوٹی زیریں میں قائم ہنڈی پر اپنے پیسے بھیجنا شروع کر دیئے ہیں جس سے ہنڈی مالکان کو لاکھوں کی غیر قانونی بچت ہونے لگی۔بیشتر ہنڈی مالکان کا ا نسانی سمگلنگ میں بھی ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ہے ایڈووکیٹ شعیب خان رمدانی ۔ اظہر حسنین ۔عبدالغفار نے پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب ۔وفاقی وزیر داخلہ۔ڈی جی ایف آئی اے سے فی الفور کاروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

ہنڈی

مزید : ملتان صفحہ آخر