’تمام مسلمان خواتین اپنا فیس بک اکاﺅنٹ فوری بند کردیں‘ بڑا حکم آگیا

’تمام مسلمان خواتین اپنا فیس بک اکاﺅنٹ فوری بند کردیں‘ بڑا حکم آگیا

برمنگھم (نیوز ڈیسک) پاکستان جیسے مشرقی اور روایت پسند معاشرے میں فیس بک نوجوان نسل کی زندگی کا لازمی جزو بن چکی ہے لیکن دوسری جانب برطانیہ جیسے ترقی یافتہ معاشرے میں مسلم خواتین کے لئے حکم جاری کر دیا گیا ہے کہ وہ اپنے فیس بک اکاﺅنٹ بند کر دیں۔

اخبار ڈیلی میل کے مطابق برطانیہ کی مختلف مساجد کی ایسوسی ایشن کی طرف سے خواتین کے لئے خصوصی ضابطہ اخلاقیات کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس ضابطہ اخلاق میں فیس بک کو گناہ اور برائی قرار دیا گیا ہے اور خواتین کو حکم دیا گیا ہے کہ وہ اپنے فیس بک اکاﺅنٹ بند کردیں۔ مرکزی مسجد بلیک برن کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والے آرٹیکل میں فیس بک کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ آرٹیکل میں کہا گیا کہ فیس بک نے گناہ کے دروازے کھول دئیے ہیں اور مسلمان لڑکیاں اور خواتین اس برائی کی شکار بن گئی ہیں۔

’محرم کے بغیر خواتین 77 کلومیٹر سے زیادہ اکیلے سفر نہیں کرسکتیں‘

اسی طرح برمنگھم کی گرین لین مسجد کی طرف سے یہ ہدایت بھی کی گئی ہے کہ خواتین پتلون مت پہنیں اور خصوصاً جینز پہننے سے گریز کریں۔ پتلون اور خصوصاً جینز پہننے کو مردوں کی نقالی قرار دیا گیا ہے اور عورتوں کے لئے اس لباس کو ممنوع قرار دیا گیا ہے۔

اسقاط حمل کو عظیم گناہ قرار دیا گیا ہے، جبکہ اداکاری اور ماڈلنگ کو غیر اخلاقی حرکات قرار دیا گیا ہے۔ خواتین کے تنہا سفر کی صورت میں فاصلے کی حد مقرر کردی گئی ہے اور بتایا گیا ہے کہ 48 میل سے زائد فاصلہ محرم کے بغیر طے نہ کیا جائے۔

دوسری جانب برطانیہ میں ہی مقیم مسلمانوں نے ان ضوابط اور پابندیوں پر سخت تنقید کی ہے۔ مسلم کونسل برطانیہ سے تعلق رکھنے والے مذہبی سکالر شیخ ہوجات رمزی نے جریدے دی ٹائمز سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ”اسلام کی یہ تشریح بالکل غلط ہے۔ یہ لایعنی ہے۔ اسلام فیس بک پر کوئی اعتراض نہیں کرتا۔ اسی طرح کسی خاتون کے مسلمان ہونے کا انحصار سکارف یا پتلون پہننے یا نہ پہننے پر نہیں ہے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...