دیوانی مقدمات کی روز سماعت کا فیصلہ، ترامیم کا بنیادی ڈھانچہ تیار

دیوانی مقدمات کی روز سماعت کا فیصلہ، ترامیم کا بنیادی ڈھانچہ تیار

لاہور(نامہ نگار خصوصی )دیوانی مقدمات کو بروقت نمٹانے کے لئے ضابطہ دیوانی کے رولز میں ترامیم کابنیادی ڈھانچہ تیار کرلیا گیا ہے ۔اس سلسلے میں لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس امین الدین کی سربراہی میں قائم رولز کمیٹی حتمی سفارشات مرتب کرکے مئی کے آخر تک چیف جسٹس سید منصور علی شاہ کو رپورٹ پیش کرے گی ۔چیف جسٹس سید منصورعلی شاہ لاہور ہائیکورٹ کا فل کورٹ اجلاس طلب کرکے ان ترامیم کی حتمی منظوری دیں گے۔ذرائع کے مطابق سول مقدمات کے بروقت فیصلے کرنے کے لئے تمام قانونی سقم دور کئے جائیں گے۔ سفارشات کے مطابق عدالت میں دیوانی دعویٰ کی سماعت سے قبل جواب دعویٰ داخل کرنے کی تجویزہے۔متعلقہ ضلع کا سینئر سول جج ایڈمنسٹریٹر جج دعویٰ دائر کرنے سے لے کر جواب دعویٰ آنے تک تمام کارروائی مکمل کروائے گاجس کے بعد دعوی سماعت کے لئے عدالت میں فکس ہوگا۔ عدالت میں دعویٰ کی سماعت روزانہ کی بنیاد پر ہوگی اور وکیل بحث کے نکات تحریری طور پر جمع کروانے کی تجویز سفارشات میں شامل کی جارہی ہے۔ذرائع کے مطابق فریقین کے وکلاء کے دلائل مکمل ہونے کے بعد ٹرائل کورٹ کے جج کو 15روز میں فیصلہ کرنے کا پابند بنانے کی تجویز ہے۔فاضل حج کو ڈگری جاری کرنے پر اس پر عمل درآمد کرنے بارے بھی حکم جاری کرنے کا پابند بنانے بارے ضابطہ دیوانی کی ترمیم میں شامل کیا جارہاہے۔عدالتی احکامات پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کے لئے قانون کو مزید سخت بنانے کی بھی تجویز ہے۔کمیٹی کے دیگر ارکان میں جسٹس شاہد کریم ،جسٹس محمد طارق عباسی،ظفر اقبال کلانوری ایڈووکیٹ اور شہزاد شوکت ایڈووکیٹ بھی شامل ہیں۔

مزید : علاقائی


loading...