قومی احتساب بیوروبہر قیمت بدعنوانی کے خاتمے کیلئے پُرعزم ہے، قمرزمان چوہدری

قومی احتساب بیوروبہر قیمت بدعنوانی کے خاتمے کیلئے پُرعزم ہے، قمرزمان ...

اسلام آباد (آن لائن ) چیئرمین نیب قمرزمان چوہدری نے کہا ہے کہ قومی احتساب بیورو کسی بھی قیمت پر بدعنوانی کے خاتمے کے لئے پُرعزم ہے، نیب نے حالیہ تین سال کے دوران ملتان ‘ سکھر اور گلگت بلتستان میں اپنے تین علاقائی دفتر قائم کرنے سمیت کئی اقدامات اٹھائے ہیں ۔ ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ نیب نے بڑی مقدار میں لُوٹے گئے پیسے واپس لیکر قومی خزانے میں جمع کرائے ہیں، انسداد بدعنوانی کیلئے جامع اور فعال حکمت عملی اختیار کی ہے جس میں کرپشن کے خلاف آگاہی، اس کی روک تھام اور اس کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لئے اقدامات شامل ہیں۔ چیئرمین نیب نے کہا کہ نیب کی بنیادی توجہ مالیاتی کمپنیوں کے فراڈ ‘ بینک فراڈ ‘ بینکوں کے ناہندگان‘ اختیار کے ناجائز استعمال اور ریاست کے فنڈزمیں حکومتی ملازمین کی جانب سے خورد برد شامل ہے۔انہوں نے کہا نیب کی ادارہ جاتی کمزوریوں کا جائزہ لے کر اس کے تمام شعبوں کو ازسرنو فعال کیا گیا ہے ،مقدمات نمٹانے کا دورانیہ زیادہ سے زیادہ 10 ماہ کیا گیا ہے۔نیب نے سی آئی ٹی کا نیا نظام متعارف کرایا ہے جس میں ڈائریکٹر ‘ ایڈیشنل ڈائریکٹر ‘ انویسٹی گیشن آفیسر اور سینئر لیگل قونصل شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ نیب نے اندرونی احتساب کے میکنزم کا نظام بھی متعارف کرایا ہے اس وقت تک 84افسران میں سے 23 کوملازمت سے برخاستگی سمیت بڑی سزائیں جبکہ 34 کو معمولی سزائیں دی گئی ہیں۔ کسی بھی ادارے میں اندرونی طور پر احتساب کی یہ سب سے بڑی مثال اورایک ریکارڈ ہے۔انہوں نے کہا کہ سی ڈی اے ‘ وزارت مذہبی امور ‘ خوراک و زراعت ‘ قومی صحت ‘ ایف بی آر ‘ پی آئی ڈی کے علاوہ صوبائی سطح پر صحت ‘ تعلیم اور ہاؤسنگ میں پریونشن کمیٹیاں تشکیل دی ہیں۔ انہوں نے نیب خیبر پختونخوا پر زور دیا کہ متعلقہ اداروں کے ساتھ ملکر مختلف محکمہ جات میں پریونشن کمیٹیاں قائم کریں۔

چیئرمین نیب

مزید : علاقائی


loading...