مقبوضہ کشمیر ، طلبہ تحریک آزادی کا ہر اول دستہ بن گئے ، بھارتی فوج حواس باختہ ، وحشیانہ تشدد درجنوں زخمی

مقبوضہ کشمیر ، طلبہ تحریک آزادی کا ہر اول دستہ بن گئے ، بھارتی فوج حواس باختہ ...

سرینگر (مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) کشمیری طلبہ نے تحریک آزادی کا بیڑہ اٹھا لیا۔ سری نگر، پلوامہ اور ہندواڑہ میں طلبہ کی جانب سے لیاں نکالی گئیں۔ قابض فورسز کی جانب سے وحشیانہ تشدد کے نتیجے میں درجنوں طلبہ زخمی ہو گئے لیکن بھارتی بربریت کیخلاف سیسہ پلائی دیوار بننے والے طلبہ نے جہاں کالج کی عمارت پر پاکستانی پرچم لہرا دیا۔وہیں مقبوضہ وادی میں 25 دیہات کے محاصرے اور املاک کی توڑ پھوڑ کیخلاف سراپا احتجاج بن گئے ،مظاہروں ،دھرنوں اور ہڑتالوں سے قابض بھارتی فورسز کے حواس اڑا کر رکھ دیئے ۔پوری وادی پاکستان اور آزادی کے حق میں نعروں سے گونجتی رہی ،کاروباری اور تجارتی مراکز بند ہیں جبکہ بھارتی فوج نے زیر حراست چھٹی جماعت کے طالبعلم کی رہائی اسکے والد کی گرفتاری سے مشروط کرتے ہوئے مذکورہ طالبعلم سمیت چار مجاہد اشتہاری قراردے کرہر ایک کی گرفتاری اور معلومات دینے کیلئے 5لاکھ روپے انعام کا اعلان کر دیا،دوسری طرف مقبوضہ کشمیر ہائیکورٹ نے 9نظر بندوں پر عائد پی ایس اے کالعدم قرار دیتے ہوئے فوری رہائی کا حکم دیدیا ، ادھر مودی سرکار نے مقبوضہ وادی میں تحریک آزادی کو کچلنے کیلئے ہندو بلوائیوں سے حملے کرانے کا ایک اور منصوبہ تیار کرلیا ہے ، کانپور میں انتہا پسند ہندووں کی پتھراؤ کی ٹریننگ کی ویڈیو سامنے آگئی ، جن سینا نامی انتہا پسند تنظیم نے آج قابض فوج کی مدد کیلئے کشمیر جانے کا اعلان کردیا ہے۔تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں طلبہ تحریک آزادی کا ہراوال دستہ بن گئے ہیں اور انہوں نے گزشتہ روز بھی سری نگر، ہندواڑہ اور پلوامہ میں سڑکوں پر نکل کر بھارتی ریاستی جبر وتشدد کیخلاف احتجاج کیا ، پلوامہ میں طالبات کی ریلی پر پولیس نے بدترین شیلنگ کی جس کے نتیجے میں متعدد طالبات ہسپتال پہنچ گئیں۔ ہندواڑہ میں بھی طلباء اور پولیس کے درمیان جھڑپیں ہوئیں۔ نہتے طلباء نے پتھروں سے قابض افواج کا مقابلہ کیا۔ پولیس کے وحشیانہ تشدد سے درجنوں طلباء زخمی ہو گئے جبکہ اس دوسران کشمیر مونیٹر کے مطابق طلباء نے کالج کے انتظامی بلاک کی عمارت پر پاکستانی پرچم لہرا دیا۔ ادھر حریت کانفرنس کے دونوں دھڑوں، فریڈم پارٹی،نیشنل فرنٹ، دختران ملت، انجمن شرعی شیعیان،تحریک مزاحمت،مسلم لیگ، اسلامک پولٹیکل پارٹی،جمعیت اہلحدیث ،امت اسلامی اوردیگر نے شوپیاں ضلع کے25دیہات کا محاصرہ کرنے کیخلاف شدید رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا فورسز کی سرگرمیوں سے صاف ظاہر ہورہا ہے نئی دلی نے نہتے کشمیریوں کیخلاف کھلی جنگ چھیڑ رکھی ہے۔جبکہ سید علی گیلانی نے کریک ڈاؤن کے دوران عام شہریوں پر زیادتیاں اور ان کے مکا نو ں ، گاڑیوں کی توڑ پھوڑ کرنے کی مذمت کرتے ہوئے کہا بھارتی فوج کو لوگوں پر تشدد ڈھانے کی کھلی چھوٹ دیدی گئی ہے ، گیلانی نے ریاستی پولیس کو خبردار کیا کہ وہ اس طرح کی کارروائیوں سے باز آجائے اور اپنی ٹانگوں پر کلہاڑی مارنے کی حماقت نہ کرے۔ جن سینا نامی تنظیم کے سربراہ کا کہنا ہے تربیت کی اجازت بھارتی وزیراعظم نے دی ہے اور وہ ہزاروں سنگبازوں اور پتھروں کے ٹرک لے کر مقبوضہ کشمیر جائیں گے۔بھارتی فوج ان دنوں کشمیر کی بیٹیوں کے احتجاج سے بھی پریشان ہے، جس کی وجہ سے قابض فوجیوں کی مدد کیلئے انتہا پسند ہندو خواتین کو بھی پتھراو اور بلوے کی تربیت دی گئی ہے۔یاد رہے پندرہ سال پہلے گجرات میں بھی انتہا پسند بلوائیوں کے ذریعے مسلمانوں پر حملے کرائے گئے تھے، اسوقت نریندر مودی گجرات کے وزیراعلیٰ تھے۔

مقبوضہ کشمیر

مزید : صفحہ اول


loading...