کورونا وائرس، پنجاب میں ایک کروڑ 12لاکھ افراد بیروزگار ہونے کاخدشہ

کورونا وائرس، پنجاب میں ایک کروڑ 12لاکھ افراد بیروزگار ہونے کاخدشہ

  

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) ایشین ڈویلپمنٹ بینک (اے ڈی بی) نے پنجاب سے متعلق ایک تہلکہ خیز رپورٹ جاری کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ صوبے میں ایک کروڑ 12 لاکھ افراد بیروزگار ہو سکتے ہیں۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کورونا وائرس سے پنجاب کو 23 کھرب روپے کا نقصان ہوگا، پنجاب حکومت نے وزیراعظم سیکرٹریٹ کو رپورٹ ارسال کر دی ہے۔ عمران خان کو پیش رپورٹ میں ایشین ڈویلپمنٹ اور پاکستان انسٹیٹوٹ آف ڈویلپمنٹ کے نئے ہو شربا اعدادوشمار سامنے آگئے۔پنجاب میں 3 درجے کے لاک ڈاون ہونے سے صوبائی معشیت کو ہونے والے نقصان کتنا ہوگا؟ مکمل لاک ڈاون کرنے سے 23 کھرب، درمیانے درجے کے لاک ڈاون سے صوبائی معشیت کو 11 کھرب 10 کروڑ جبکہ معمولی درجے کے لاک ڈاون سے صوبائی معشیت کو 1 کھرب 43 ارب روپے کا نقصان ہو گا۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مکمل لاک ڈاون کرنے سے 1 کروڑ 12 لاکھ افراد، درمیانے درجے کے لاک ڈاون سے صوبے میں 90 لاکھ 30 ہزار افراد جبکہ معمولی درجے کے لاک ڈاون سے 10 لاکھ 80 ہزار افراد کے بے روزگار ہونے کا اندیشہ ہے۔نئی رپورٹ کے مطابق پنجاب میں غربت بڑھنے کا اندیشہ 54 فیصد ظاہر کیا گیا ہے، مکمل لاک ڈاون ہونے سے صوبے میں غربت 34.3 فیصد بڑھ سکتی ہے۔ درمیانے درجے کے لاک ڈاون سے غربت 19.9 فیصد بڑھنے کا اندیشہ ظاہر کیا گیا ہے۔ معمولی درجے کے لاک ڈاون سے غربت 9عشاریہ 4فیصد بڑھ سکتی ہے۔

ایشیائی ترقیاتی بینک

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانوی وزیر اعظم نے پیر سے لاک ڈاؤن میں نرمی کا اعلان کردیا ہے، بھارت میں صرف اپریل کے مہینے میں 12کروڑ 20 لاکھ شہری کی نوکریاں ختم ہوئی ہیں۔ اس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ بھارت میں امریکا کے مقابلے میں چار گنا زیادہ افراد بیروگار ہوئے ہیں۔تفصیلات کے مطابق کورونا سے صحتیاب ہونے کے بعد پہلی بار پارلیمان میں سوالات و جواب کے سیشن میں گفتگو کرتے ہوئے برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن کا کہنا تھا کہ اتوار کو لاک ڈاؤن میں نرمی کے منصوبے کی تفصیل بتائیں گے جبکہ حکومت جمعرات کو لاک ڈاؤن کا جائزہ لے گی۔خبر رساں ادارے کے مطابق انہوں نے مئی کے آخر تک یومیہ دو لاکھ کورونا ٹیسٹ کرنے کا اعلان بھی کیا ہے۔دوسری طرف امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ وائٹ ہاؤس کورونا وائرس ٹاسک فورس غیر معینہ مدت تک اپنا کام جاری رکھے گی مگر اب ہدف حفاظتی اقدامات کو یقینی بناتے ہوئے ملک کو دوبارہ کھولنا ہے۔ اس کی توجہ ویکسین اور علاج کے طریقوں پر ہو گی۔اپنے ایک ٹویٹ میں انھوں نے کہا کہ ہم اس فورس میں کچھ مزید لوگوں کو شامل کریں یا نکالیں مگر انھوں نے ان افراد کے بارے میں کچھ نہیں بتایا کہ وہ کون ہو سکتے ہیں۔مزید برآں بھارت میں کورونا وبا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے جاری لاک ڈاؤن سے صرف اپریل کے مہینے میں 12 کروڑ 20 لاکھ شہریوں کی نوکریاں ختم ہوئی ہیں۔یہ اعداد و شمار ایک نجی تحقیقاتی ایجنسی ’سینٹر فار مانیٹرنگ دی انڈین اکانومی‘ کی طرف سے جاری کیے گئے ہیں۔ بھارت میں بیروزگاری کی شرح ریکارڈ 27 فیصد تک بڑھ گئی ہے۔ نئے اعداد و شمار سے معلوم ہوتا ہے کہ بھارت میں امریکہ کے مقابلے میں چار گنا زیادہ افراد بیروگار ہوئے ہیں۔انڈیا میں سرکاری طور پر نوکریوں سے متعلق اعداد و شمار جاری نہیں کیے جاتے لیکن اس ادارے کے ڈیٹا کو بڑے پیمانے پر تسلیم کیا جاتا ہے۔ ملک میں 25 مارچ سے لاک ڈاؤن ہے اور اب تک تقریباً 50 ہزار مصدقہ کیسز رپورٹ کیے جا چکے ہیں۔اْدھر یورپین کمیشن نے خبردار کیا ہے کہ یورپی یونین کو تاریخی ساز کساد بازاری جیسی صورتحال کا سامنا ہے۔کمیشن کی پیش گوئی کے مطابق اس سال کورونا وائرس کی وجہ سے معیشت میں سات اعشاریہ سات فیصد کمی دیکھنے میں آئے گی، جو ایک غیر یقینی صورتحال کو جنم دے گی۔سب سے زیادہ سنگین پیش گوئی یونان کے لیے ہے جہاں معیشت میں یہ کمی تقریباً دس فیصد تک بنتی ہے، جو اس معاشی بحران کے دوران ملک میں پیش آنے والے بدترین سال سے بھی قدرے زیادہ ہوگی۔معاشی امور کے کمشنر پاولو جینتیلونی نے کہا کہ کسی مشترکا امدادی پیکج کے بغیر یوروپی یونین کا منصوبہ اور واحد کرنسی کا تصور بھی خطرے میں پڑ سکتا ہے۔جرمنی کی معیشت میں جلد بہتری کی جانب گامزن ہو گی، جو سال 2020 میں 6.5 فیصد کی کمی ہو گی اور 2021 میں 5.9 فیصد کی کی ریکوری کی پیش گوئی کی گئی ہے۔2020 میں یورو زون میں بے روزگاری میں دو فیصد اضافے سے 9.6 فیصد تک اضافے کی پیش گوئی کی جارہی ہے جبکہ یونان اور سپین سب سے زیادہ متاثر ہوں گے۔مزید برا?ں ایران میں حکومت کا کہنا ہے کہ کووڈ 19 کے انفیکشنز کے مصدقہ کیسز کی تعداد 101650 ہوگئی ہے۔ ملک میں وائرس کے کیسز کم ہونے کے بعد ایک بار پھر بڑھنے لگے ہیں۔وزراتِ صحت کے ترجمان کا کہنا ہے کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں وبا کے باعث مزید 78 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ جسکے بعد ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 6418 ہو گئی ہے۔ ایران وبا سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے ممالک میں شامل ہے۔ مبصرین کا کہنا ہے کہ سرکاری اعداد و شمار شاید اصل صورتحال کی ترجمانی نہیں کرتے۔

بھارت بیروزگاری

مزید :

صفحہ اول -