حکومت تمام تاجروں کو کاروبار کرنیکی اجازت دے‘ خواجہ سلیمان صدیقی

  حکومت تمام تاجروں کو کاروبار کرنیکی اجازت دے‘ خواجہ سلیمان صدیقی

  

ملتان (نیوزرپورٹر) مرکزی تنظیم تاجران پاکستان نے حکومت سے مطالبہ کرتے ہو ئے کہا ہے کہ تاجر برادری سمیت تمام شعبہ ہائے سے وابستہ کاروباری طبقہ کو 10مئی سے دن 11بجے سے شام 5بجے تک دکانیں کھولنے کی اجازت دی جائے ماہ رمضان المبارک میں صبح 9بجے سے دن 2بجے تک دکانیں کھولنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے گندم سیزن میں لاک ڈاؤن کا سب سے زیادہ فائدہ پولیس اور کارپوریشن کو ہوا جنہوں نے بلاوجہ تاجروں اور دکانداروں کو ہزاروں کی(بقیہ نمبر33صفحہ7پر)

تعداد میں پکڑ پکڑ کر مال بناؤسیزن کے تحت سال کی کمائی کرلی ان خیالات کا اظہار مرکزی تنظیم تاجران پاکستان کے مرکزی چیئرمین خواجہ سلیمان صدیقی،شیخ اکرم حکیم،حاجی بابر علی قریشی،ادریس بٹ، شیخ جاوید اختر، خالد محمود قریشی، ذیشان صد یقی،اشفاق انصاری، میاں آفاق انصاری،ملک قاسم بوسن، شیخ الطاف، کامران بھٹہ، ودیگر عہدیداران نے پریس کلب میں ہنگامی پریس کانفرنس کے دوران کیا خواجہ سلیمان صدیقی نے مزید کہا کہ چھوٹے تاجر اور دکاندار گذشتہ ڈیڑھ ماہ سے لاک ڈاؤن کی وجہ سے چھوٹے تاجر اور دکاندار معاشی بدحالی کا شکار ہو کر رہ گئے ہیں جبکہ رہی سہی کسر تمام مارکیٹوں اور بازاروں کے داخلی و خارجی راستوں پر بیر یئرز لگاکر پوری کردی اور خواتین تک کو اہلخانہ کے ساتھ گھروں میں جانے سے روک دیا جس کی وجہ سے آج اہلیان ملتان ضلعی انتظامیہ کے خلاف سراپا احتجاج ہیں انہوں نے کہا کہ گندم اور کپاس کے سیزن میں لاک ڈاؤن کے باعث پولیس اور کارپوریشن نے مال بناؤ سیزن کے تحت سال بھر کی کمائی کرلی تاجروں اور دکانداروں کو پکڑ پکڑ کر پانچ پانچ ہزار روپے لیکر پولیس دیہاڑی بنانے لگ گئی ہے گذشتہ دو روز کے دوران بھی ملتان پولیس نے اڑھائی سو کے قریب تاجروں کو پکڑا اور ان سے پانچ پانچ ہزار روپے لیکر دیہاڑی بنا کر چھوڑ دیا اگر موجودہ حکومت لاک ڈاؤن میں نر می کرنا چاہتی ہی ہے تو صرف کپڑے کی مارکیٹوں کی بجائے تمام شعبہ ہائے سے وابستہ کاروبار زندگی کی دکانوں کو کھولنے کے احکامات جاری کردیں کیونکہ صرف کپڑے کی دکانیں کھولنے کا کوئی فائدہ نہیں الیکٹرونکس، موبائل اور شوز شاپس سمیت تمام دکانیں کھولنے کی ہدایت دی جائے حکومتی ہدایت پر ایس او پیز کے تحت کاروبار کو جاری رکھا جائے گا اگر کوئی تاجر ایس او پیز کے تحت عمل نہیں کرے گا اور اس کے خلاف ضلعی انتظامیہ کوئی کاروائی کرے گی تو ہم اس کے پیچھے نہیں جائیں گے انہوں نے کہا کہ نادرا سمیت دیگر ادارے کھل جانے کی وجہ سے شہریوں کا جم غفیر ہے وہاں حکومت و انتظامیہ کو کرونا نظر نہیں آتا تاہم بازاروں، مارکیٹوں، پلازوں میں آنے والے شہریوں کے جان و مال کے تحفظ کی ذمہ دار حکومت ہے وہ شہریوں کو سیفٹی ماسک اور سینا ٹائزر مہیا کریں جبکہ تاجر اور دکاندار اپنی دکانوں پر سیفٹی ماسک، سینا ٹائزر سمیت سماجی فاصلوں کا خیال رکھیں گے انہوں نے کہا کہ یہ کیساسمارٹ لاک ڈاؤن ہے جس میں شہریوں کو ریلیف دینے کی بجائے جگہ جگہ بیر یئرز کھڑے کردیئے گئے ہیں اور شہریوں کے لئے مشکلات پیدا کردی گئی ہیں ایک سوال کے جواب میں خواجہ سلیمان صدیقی نے مزید کہا کہ ماہ رمضان المبارک میں اب صرف دس روز ہی چھوٹے تاجروں، دکانداروں کے لئے ہیں کیونکہ پانچ چھ روز ہیئر ڈریسر، شوز،کاسمیٹیکس دکانداروں کے ہوتے ہیں اسی لئے حکومت کو چاہیئے کہ وہ 60لاکھ تمام کاروبار زندگی سے منسلک چھوٹے تاجروں اور دکانداروں کو دن گیارہ بجے سے شام پانچ بجے تک دکانیں کھولنے کی اجازت دے تاکہ وہ بھی عید کی خوشیوں میں شریک ہوسکیں۔

اجازت

مزید :

ملتان صفحہ آخر -