ٹانک، پولیس اہلکاروں کی تنخواہوں سے بھتہ کٹوتی کیخلاف محسود قبائل کا احتجاج

ٹانک، پولیس اہلکاروں کی تنخواہوں سے بھتہ کٹوتی کیخلاف محسود قبائل کا احتجاج

  

ٹانک(نمائندہ خصوصی)جنوبی وزیرستان پولیس اہلکاروں کی تنخواہوں سے بھتہ کٹوتی پر محسود قبائل کا جاری دھرنے میں شدید احتجاج، لوٹ کھسوٹ میں ملوث اہلکاروں کو احتساب کے کہٹرے میں لایا جائے، قبائلی عمائدین،تفصیلات کے مطابق آج بروز بدھ ڈپٹی کمشنر کمپاؤنڈ جنوبی وزیرستان کے سامنے محسود قبائل کے جاری دھرنے میں حال ہی میں خاصہ دار فورس سے محکمہ پولیس میں شامل ہونے والے 3024 پولیس اہلکاروں کی ماہانہ تنخواہوں سے پولیس اکاؤنٹنٹ اور دیگر عملے کی ملی بھگت سے فی اہلکار تین ہزار روپے کٹوتی پر محسود قبائل نے شدید احتجاج کیا، احتجاجی دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے ملک رحمت شاہ، سردار نجیب اور دیگر نے کہا کہ پولیس جوانوں کی تنخواہوں سے کٹوتی ظلم اور زیادتی ہے، ان کا کہنا تھا کہ قبائلی علاقوں میں پولیس نظام تو لایا گیا ہے لیکن ابھی تک وہی پرانے دور کی قوانین کے تحت نظام چل رہا ہے کسی سے کوئی پوچھ گھوج کا نظام نہیں ہر ایک آفیسر اپنی اختیارات کا ناجائز استعمال کرکے بدعنوانیوں میں مصروف عمل ہے، عمائدین کا کہنا تھا کہ اے جی پی ار رولز کے تحت ہر سرکاری ملازم کو اسکی ماہانہ تنخواہ بینک اکاؤنٹ کے ذریعے دینی چاہیے لیکن ڈسٹرکٹ پولیس حکام جنوبی وزیرستان کی لالچ کی وجہ سے ان کی تنخواہیں مینول طریقے سے دے کر نہ صرف حکومتی احکامات کی خلاف ورزی کررہے ہیں بلکہ تنخواہوں سے غیر قانونی کٹوتی کرکے غریب پولیس اہلکاروں کی حقوق پر ڈھاکا ڈالے ہوئے ہیں، عمائدین کا کہنا تھا کہ خاصہ دار فورس پولیس میں شامل ہونے کے بعد اس وقت کے ائی جی پولیس خیبر پختونخواہ کے ساتھ 21 نقاط تحریری معائدے میں یہ طے پایا گیا تھا کہ قبائلی اضلاع کے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر کے دفاتر میں مقامی اہلکاروں کو تعینات کیا جائے گا لیکن پولیس ڈیپارٹمنٹ جنوبی وزیرستان میں لوٹ مار کیلئے غیر مقامی پولیس اہلکاروں کو کماو پوسٹوں پر تعینات کرکے معائدے کی خلاف ورزی کررہے ہیں، قبائلی عمائدین نے بدعنوانیوں میں ملوث اہلکاروں کو احتساب کے شکنجے میں لانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہاکہ لوٹ مار میں ملوث اہلکاروں کے خلاف کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی تو محسود قبائل کا جاری احتجاجی دھرنا کو ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر دفتر کے سامنے منتقل کردیا جائے گا، اور حالات خرابی کی تمام تر ذمہ داری کرپٹ پولیس حکام پر ہوگی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -