عام انتخابات ‘کنزرویٹو پارٹی کو مسلمانوں کے ووٹ نہیں ملیں گے، سعیدہ وارثی

عام انتخابات ‘کنزرویٹو پارٹی کو مسلمانوں کے ووٹ نہیں ملیں گے، سعیدہ وارثی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لندن(بیورورپورٹ)برطانیہ کی حکمران کنزرویٹو یا قدامت پسند پارٹی کی رکن سعیدہ وارثی نے کہا ہے کہ اگلے سال کے عام انتخابات میں کنزرویٹو پارٹی یقینا مسلمانوں کا ووٹ نہیں حاصل کر سکے گی اور اسے ووٹ حاصل کرنے کے لیے بہت محنت کرنا پڑے گی۔ تفصیلات کے مطابق جب سعیدہ وارثی سے پپوچھا گیا کہ کیا کنزرویٹو پارٹی مسلمانوں کے ووٹ سے ہاتھ دھو بیٹھی ہے تو انھوں نے جواب میں کہا کہ یہ ایک درست جائزہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کی کئی وجوہات ہیںخاص طور پر اس غزہ کی لڑائی پر برطانیہ نے کوئی رول ادا نہیں کیا یہ اس کا نتیجہ ہو گا۔ وارثی نے غزہ کی جنگ کی بنیاد پر اگست میں وزارت خارجہ کے وزیر کے طور پر استعفی دے دیا تھا۔انہوں نے کہا کہ کنزرویٹو قیادت کو بخوبی احساس ہے کہ ان کے کئی فیصلوں کا مسلمانوں کی کمیونٹیز میں انھیں دفاع کرنے میں مشکلیں پیش آئیں گی۔ کنزرویٹو اب ہندوں کو اپنی توجہ کا مرکز بنا رہے ہیں کیونکہ وہ ایک آسان ہدف ہے۔ انہوں نے کہا کہ برطانوی حکومت تو غزہ میں اسرائیل کی کارووائی کی صحیح الفاظ میں مذمت بھی نہ کر سکی۔
 ذرائع کا کہنا ہے کہ حال ہی میں ایرانی حکومت نے ایک اعلیٰ شخصیت کو دمشق اس مقصد کے لیے بھیجا ہے تاکہ وہ الگ الگ ناموں کے ساتھ جنگ میں شامل شیعہ عسکری گروپوں کو ایک کمان میں متحد کرنے کے لیے ان کی قیادت سے بات چیت کر سکیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ شام میں متوازی فوج لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کی طرز پر بنائی جا سکتی ہے۔ اس کے علاوہ خود حزب اللہ بھی اس متوقع غیر سرکاری عسکری اتحاد کا حصہ بن سکتی ہے۔ ایران نے شام میں متوازی فوج کی تشکیل کی کوششیں ایک ایسے وقت میں شروع کی ہیں جب صدر بشار الاسد نے اپنی فوج کی افرادی قوت کو بڑھانے کے لیے نئی بھرتیوں کے ساتھ ریزرو فوج سے اہلکاروں کی واپسی اور فوج کی لازمی سروس کی مدت مکمل ہونے کے بعدشہریوں کی فوجی خدمات ترک کرنے پر پابندی عائد کر دی ہے۔ حکومت کی جانب سے کہا گیا ہے کہ موجودہ ہنگامی حالات میں کوئی شخص فوج سے واپس نہ جائے۔

مزید :

عالمی منظر -