وزیراعظم نا اہلی کیس ،وزیراعظم کے اسمبلی فلور پر بیان کی آرمی چیف نے تردید نہیں کی ،سپریم کورٹ

وزیراعظم نا اہلی کیس ،وزیراعظم کے اسمبلی فلور پر بیان کی آرمی چیف نے تردید ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

                اسلام آباد(اے این این)وزیر اعظم نا اہلی کیس میں جسٹس سرمد جلال عثمانی نے ریمارکس دئیے ہیں کہ وزیر اعظم کے اسمبلی فلور پر بیان کی آرمی چیف نے تردید نہیں کی،نااہلی کے لئے لگائے گئے الزامات ثابت نہیں ہوئے،مقدمے کی سماعت 10نومبر کو کوئٹہ میں ہو گی۔جمعرات کو قائم مقام چیف جسٹس جواد ایس خواجہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے وزیراعظم کی نااہلی سے متعلق چوہدری شجاعت حسین،گوہر نواز سندھو اور اسحاق خاکوانی کی درخواستوں کی سماعت کی۔دوران سماعت جسٹس سرمد جلال عثمانی نے ریمارکس دئیے کہ وزیر اعظم نے اسمبلی کے فلور پر جو بھی کہا آرمی چیف نے اسکی تردید نہیں کی۔وزیر اعظم پر لگائے گئے الزامات ثابت نہیں ہوئے۔وزیر اعظم اور آرمی چیف کے درمیان اکثر ملاقاتیں ہوتی رہتی ہیں ۔ عدالت نے ہدایت کی کہ وزیر اعظم کی نا اہلی سے متعلق تینوں درخواستوں پر سماعت 10 نومبر کو سپریم کورٹ کوئٹہ رجسٹری میں ہوگی۔ پی ٹی آئی کے وکیل عرفان قادر نے کہا کہ ہمارے کیس کی باری آتی ہے تو ہمیں سنا نہیں جاتا۔جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا کہ آپ کو سارا دن کوئٹہ میں سنیں گے، عرفان قادر نے کہا کہ وہ کیس کی پیروی کے لئے کوئٹہ نہیں جا ئیں گے ۔وہ سپریم کورٹ کے سنیئر وکیل ہیں انکی درخواست تک نہیں لگائی جا رہی۔انہوں نے کہا کہ انہوں نے بنچ کی تشکیل کے خلاف درخواست جمع کرائی جسے رجسٹرار نے اعتراض لگا کر مسترد کر دیا۔رجسٹرار کے اعتراضات کے خلاف بھی اپیل کی جس کی سماعت نہیں کی جا رہی۔انکی درخواست زیر التوا ہے وہ کوئٹہ کیوں جائیں، انہوں نے کہا کہ عدالتی فیصلے کے خلاف نظر ثانی درخواست دائر کریں گے یہ انکا قانونی حق ہے۔ سپریم کورٹ سے انصاف ہوتا نظر نہیں آ رہا۔جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا کہ آپ کو کوئی جلدی ہے تو کیس کی جلد سماعت سے متعلق درخواست دائر کر دیں۔آئین کے آرٹیکل 63 کے تحت وزیر اعظم کی نا اہلی کے لئے براہ راست اسپیکر کے پاس جانا نہیں بنتا۔عدالت نے جائزہ لیا آرٹیکل 63 کی تشریح کے لئے سپریم کورٹ کا کوئی لارجربنچ نہیں بنا۔واضح رہے کہ سپریم کورٹ وزیراعظم نواز شریف کی نااہلی کے خلاف تین مختلف درخواستوں کی سماعت کر رہی ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ وزیراعظم نے اسمبلی کے فلور پر غلط بیانی سے کام لیا جس کے بعد وہ آرٹیکل 62،63 کے تحت صادق اور امین نہیں رہے۔
 نااہلی کیس

مزید :

صفحہ اول -