اعجاز الااحسن نے لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس کے عہدے کا حلف اٹھالیا

اعجاز الااحسن نے لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس کے عہدے کا حلف اٹھالیا

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )مسٹر جسٹس اعجاز الااحسن نے لاہور ہائی کورٹ کے نئے چیف جسٹس کی حیثیت سے اپنے عہدے کا حلف اٹھالیا جبکہ مسٹر جسٹس منظور احمد ملک اور مسٹر جسٹس سردارطارق مسعود نے سپریم کورٹ کے ججوں کے طور پر حلف اٹھایا ۔چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ مسٹر جسٹس اعجاز الاحسن سے گورنر پنجاب محمد رفیق رجوانہ نے حلف لیاجبکہ مسٹر جسٹس منظور احمد ملک اور مسٹر جسٹس سردار طارق مسعود سے چیف جسٹس پاکستان مسٹر جسٹس انور ظہیر جمالی نے سپریم کورٹ اسلام آباد میں حلف لیا ۔چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کی گورنر ہاؤس میں ہونے والی تقریب حلف برداری میں وزیر اعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف، سپیکر پنجاب اسمبلی، لاہور ہائی کورٹ کے جج صاحبان ، صوبائی وزراء، پاکستان بار کونسل کے وائس چیئرمین، لاہور ہائی کورٹ بار ایسو سی ایشن اور لاہور بار ایسو سی ایشن کے صدور و دیگر عہدیداروں سمیت سینئر وکلاء ، وفاقی و صوبائی لاء افسران، سول افسران اور اعلی حکام نے شرکت کی۔ حلف برداری کی تقریب کے بعد عدالت عالیہ پہنچنے پر فاضل چیف جسٹس کو پولیس کے چاک و چوبند دستے نے گارڈ آف آنر پیش کیا، اس موقع پر عدالت عالیہ کے فاضل جج صاحبان، افسران اور عدالتی اہلکاروں نے فاضل چیف جسٹس کو خوش آمدید کہا اور مبارکباد پیش کی۔ لاہور ہائی کورٹ کے نئے چیف جسٹس مسٹر جسٹس اعجاز الااحسن 5 اگست 1960 ء کو مری میں پیدا ہوئے ،انہوں نے اپنی ابتدائی تعلیم لاہور میں حاصل کی۔ایف سی کالج لاہور سے 1979 میں میرٹ سکالرشپ لے کر گریجوایشن کی ڈگری حاصل کی۔گریجوایشن کے بعد مسٹر جسٹس اعجاز الااحسن نے پنجاب یونیورسٹی لاء کالج میں داخلہ لیا ۔جہاں پر انہوں نے اپنی تعلیمی کارکردگی کی بنا پرمختلف ایوارڈز کے علاوہ گولڈ میڈل بھی حاصل کیا ،اس کے علاوہ ہائر ایجوکیشن کی جانب سے نتھیا گلی میں منعقدہ ''سمر موٹ "میں ملک کی تمام یونیورسٹیوں میں پہلی پوزیشن حاصل کی۔ایل ایل بی کے بعد فاضل چیف جسٹس نے سول اور فوجداری مقدمات میں پریکٹس شروع کردی ، اعلی تعلیم کیلئے کارنیل یونیورسٹی نیویارک میں داخلہ لیا اور 1987 میں ایل ایل ایم کی ڈگری حاصل کی۔مسٹر جسٹس اعجاز الااحسن نے امریکہ واپسی پرسول ،بینکنگ،پراپرٹی ، کمرشل اور آئینی معاملات میں پریکٹس شروع کی اور ایک معروف لاء فرم کے شراکت دار بنے۔ عدالت عالیہ اور عدالت اعظمیٰ میں بہت سے کیسوں میں پیش ہوئے اور کئی کیسوں میں ثالث بنے۔متعدد ٹریننگ کورسزاورکانفرنسز میں شرکت کی۔مسٹر جسٹس اعجاز الااحسن برٹش کونسل کی جانب سے سکالرشپ پر کمرشل لاء کی تعلیم کیلئے برطانیہ گئے ،ساؤتھ ویسٹرن انسٹیٹیوٹ فار انٹرنیشنل سٹڈیز ڈلاس امریکہ سے بھی فیلو شپ حاصل کی۔کئی سال تک کمرشل لاء کی تعلیم مختلف اداروں میں دیتے رہے۔مسٹر جسٹس اعجاز الااحسن 15 ستمبر 2009 کو لاہور ہائیکورٹ کے جج بنے اور انہیں 11 مئی 2011 کو کنفرم کیا گیا ،اس دوران 2010 میں نیشنل جوڈیشل کانفرنس اسلام آباد ، نیشنل کانفرنس اے ڈی آر لاہور ،2010 میں انٹرنیشنل جوڈیشنل کانفرنس اسلام آباد،2011 میں نیشنل جوڈیشل کانفرنس اسلام آباد اور ساؤتھ ایشیا کانفرنس آن انوائرمنٹل جسٹس بھوربن میں شرکت کی۔مسٹر جسٹس اعجاز الااحسن نے امریکہ ، چین اور جاپان میں مختلف کانفرنسز اور تعلیمی دوروں میں عدالت عالیہ کی نمائندگی کی۔

مزید :

صفحہ آخر -