قبائلی علاقوں میں شادی کے خواہشمند نوجوانوں کی بھاری پتھر اٹھانے کی روایت برقرار

قبائلی علاقوں میں شادی کے خواہشمند نوجوانوں کی بھاری پتھر اٹھانے کی روایت ...
قبائلی علاقوں میں شادی کے خواہشمند نوجوانوں کی بھاری پتھر اٹھانے کی روایت برقرار

  


ڈیرہ غازی خان (ویب ڈیسک) قبائلی علاقوں میں طاقت کے اظہار کی روایت صدیوں پرانی ہے، قبائلی علاقوں میں مختلف قسم کی دلچسپ اور عجیب وغریب رسومات صدیوں سے چلی آرہی ہیں، انہی میں سے ایک روایت شادی کیلئے بھاری پتھر اٹھانا بھی ہے.

تونسہ کے قبائلی علاقوں پر چودوان، درابن، درائے زندہ میں ایک ایسی ہی روایت کے مطابق قبائلی شادی کے خواہشمند نوجوانوں کو بھاری پتھر اٹھانے کی شرط کو پورا کرنا پڑتا ہے، شادی کے خواہش مند نوجوانوں کیلئے ایک دن مقرر کیا جاتا ہے اس دن نوجوان بھاری پتھر جس کا وزن 3 سے 5 من تک ہوتا ہے اٹھا کر 15منٹ تک پیٹھ پر رکھنا ہوتا ہے، جو جوان پتھر اٹھانے میں کامیاب ہوجاتا ہے اس کو شادی کی اجازت مل جاتی ہے ۔ اس میں کچھ نوجوان ناکام بھی ہوتے ہیں مگر اس میں پریشانی کی کوئی بات نہیں کیونکہ دوبارہ تیاری کرکے میدان میں آنے کا موقع دیا جاتاہے اور اس وقت تک کوشش جاری رہتی ہے جب تک وہ پتھر کو اٹھانے میں کامیاب نہیں ہوجاتے۔

ٹیلی نار نے پاکستان کے بڑے سکول چین کے ساتھ مل کر عالمی ریکارڈ بنا ڈالا، کیا کارنامہ سرانجام دیا؟ جاننے کیلئے یہاں کلک کریں‎‎

روزنامہ دنیا کے مطابق اس سلسلے میں علاقہ کے معروف کاکا پہلوان نوجوانون کو پتھر اٹھانے کی تربیت دیتے ہیں جن سے تربیت پاکر کئی نوجوان بھاری پتھر اٹھانے میں کامیاب ہوکر رشتہ ازدواج سے منسلک ہوگئے۔

مزید : ڈیرہ غازی خان


loading...