ایجوکیشن راؤنڈاپ

ایجوکیشن راؤنڈاپ

  



اولڈراونیز ایسوسی ایشن لاہور گزشتہ 30سال سے نہ صرف ہر سال بہت بڑے عشایئے کا اہتمام کرتی ہے بلکہ وقتاً فوقتاً راونیز کے اعزاز میں تقریبات کا اہتمام کرتی رہتی ہے۔

گزشتہ دنوں ایسوسی ایشن کی طرف سے جناب ذوالفقار احمد چیمہ کی کتاب کی تقریب رونمائی کا اہتمام کیا گیا لیکن بوجوہ اس تقریب میں شرکت نہ ہوسکی۔ازاں بعد لاہور چیمبر آف کامرس کے نو منتخب صدر عرفان اقبال شیخ کے اعزاز میں ایک پروقار تقریب کا اہتمام کیا گیا جس میں اولڈ راونیز کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔ سٹیج سیکرٹری کے فرائض ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری شہباز احمد شیخ سرانجام دے رہے تھے۔ ہال میں داخل ہوتے ہی ہماری ملاقات چودھری مجید یوسف،چودھری جاوید سلیم اور عثمان زمرد سے ہوئی۔ اس تقریب میں عرفان اقبال شیخ سے متعارف ہونے کا موقع ملا۔ ان کے پرانے کلاس فیلوز، پرانے دوستوں،گورنمنٹ کالج لاہور کے دوستوں، کلاس فیلوز اور اولڈ راونیز ایسوسی ایشن کے عہدیداروں نے ان کی شخصیت کے مخلتف پہلوؤں پر تفصیلاً اظہار خیال کیا اور ان کی شریک حیات محترمہ بیگم آمنہ عرفان اقبال شیخ نے بھی گھریلو امور میں ان کے تعاون اور حسن سلوک کا بھرپور اعتراف کرتے ہوئے انہیں خراجِ تحسین پیش کیا اس موقع پر جناب شہبازاحمد شیخ نے کہا کہ وہ ایسوسی ایشن کے رکن مجلسِ عاملہ ہیں اور ہمیشہ ایسوسی ایشن سے بھرپور فراخدلانہ تعاون کرتے ہیں۔ خواتین ونگ کی صدر شیریں اسد نے بھی عرفان اقبال شیخ کے ایسوسی ایشن سے تعاون اور وابستگی کو سراہا۔ جناب عرفان اقبال شیخ نے اپنی تقریر میں کہا کہ ملک میں سیمی مارشل لاء کی کیفیت ہے اور کاروباری و تجارتی حالات کو بہتر ہونے میں ڈیڑھ دو سال کا عرصہ لگ سکتا ہے انہوں نے لاہور چیمبر کے مختلف شعبہ جات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ ملک کا سب سے بڑا چیمبر آف کامرس ہے اور اراکین کے لئے ہر قسم کی سہولیات میسر ہیں اور بعض نئی سہولیات اور نئی روایات کے لئے ان کی کوششیں جاری ہیں۔

عرفان اقبال شیخ نے راونیز کو ایک پلیٹ فارم مہیا کرنے اور شاندار تقریبات کے انعقاد پر صدر ایسوسی ایشن ایس ایم ظفر اور سکرٹری شہباز احمد شیخ کی کوششوں کو سراہا اور کہا کہ ایسوسی ایشن کے لئے ان کا تعاون ہمیشہ جاری رہے گا۔ اس تقریب میں سینئر وائس پریذیڈنٹ سرفراز احمد نے عرفان اقبال شیخ کو ایک شیلڈ بھی پیش کی۔ جن احباب نے اس موقع پر اظہار خیال کیا ان میں عماد اللہ شیخ، میاں ارشد، خالد عباس ڈار، مظہر الرحمن، تنویر عباس تابش، سعید خان اور دیگر شامل تھے۔ تمام مقررین نے رفاہی اور فلاحی سرگرمیوں کے لئے عرفان اقبال شیخ کے گرانقدر تعاون اور فراغ دلی کا تذکرہ کیا جس کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اللہ تعالیٰ انہی کو عطا کرتا ہے جو اس کے راستے میں خرچ کرتے ہیں۔

٭٭٭

مزید : ایڈیشن 1