کارڈیالوجی انسٹی ٹیوٹ‘ ویلفیئر فارمیسی میں لاکھوں کی کرپشن‘ 5ملازمین برطرف

  کارڈیالوجی انسٹی ٹیوٹ‘ ویلفیئر فارمیسی میں لاکھوں کی کرپشن‘ 5ملازمین ...

  



ملتان (وقا ئع نگار)چودھری پرویز الہی انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی کی پیشنٹ ویلفیئر فارمیسی میں لاکھوں کی کرپشن پر پانچ ملازمین کو برطرف کردیا گیا ہے جبکہ مرکزی کرداروں فارماسسٹوں کو بچا لیا گیا ہے۔چیئرمین پیشنٹ ویلفیئر فارمیسی(پرائیویٹ)نے تین کمپیوٹر آپریٹر/کیشیئر محمد نعیم،خواجہ شمیر سجاد،خلیق طاہر،جونیئر ٹیکنیشن محمد صلاح اور قیصر عباس کو برطرف کردیا ہے مگر اس کرپشن میں ملوث تمام فارماسسٹ اشفاق انصاری،حنا اور دیگر کو بچا لیا گیا ہے۔ذرائع کے مطابق اس پرائیویٹ فارمیسی (بقیہ نمبر33صفحہ12پر)

پر ہر ہفتے زینیکس گولی 20 یا 30 تک خریدی جاتی تھیں جسکی مارکیٹ میں قیمت 254 روپے ہیمگر مارکیٹ میں یہ گولی بلیک میں 25سو سے 3 ہزار میں فروخت ہورہی ہے۔تاہم اس بلیک میں فروخت کا فائدہ اٹھاتے ہوئے فارمسسٹوں نے یہ گولی ایک ڈسٹری بیوٹر کو 18 سو سے 19 سو میں فروخت کرکے لاکھوں روپے کمائے اور اپنی جیب میں ڈال لئے۔اور کارڈیالوجی انسٹی ٹیوٹ میں طلب سے زائد زینیکس گولی منگوانا شروع کردی ایک دفعہ 150 اور دوسری دفعہ 130 گولیاں منگوائی گئیں۔کارڈیالوجی انسٹی ٹیوٹ انتظامیہ کے مطابق فارماسسٹ کسی قسم کی کرپشن اور بدعنوانی میں ملوث نہیں ہیں۔جو ملازم کرپشن میں ملوث پائے گئے تھے انہیں برطرف کردیا گیا ہے ان ملازمین کی ملازمت سرکاری نہیں تھی بلکہ پرائیویٹ فارمیسی پر وہ پرائیویٹ حیثیت میں کام کررہے تھے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر