تھیٹر کو مفاد پرستوں ٹولے نے تباہ کر دیا، فنکار برادری

  تھیٹر کو مفاد پرستوں ٹولے نے تباہ کر دیا، فنکار برادری

  



لاہور(فلم رپورٹر)شوبز کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والی شخصیات کا کہنا ہے کہ تھیٹر کو موجودہ مقام تک لانے میں کوئی ایک قصور وار نہیں ہے اس کی حقیقی شکل بگاڑنے میں سب نے اپنا اپنا حصّہ ڈالا ہے۔کچھ لوگ جب بھی اس بارے میں آواز اٹھاتے ہیں تو مفاد پرست ان کی آواز کو دبا دیتے ہیں۔اگر تھیٹر کو سدھارنے کی کوشش نہ کی گئی تو اس شعبہ کا حال بھی فلم والا ہوگا۔شوبز شخصیات کا کہنا ہے کہ تھیٹرڈرامہ سنسر شپ کا معیار صرف دوستوں کے ہمراہ ڈرامہ دیکھنے تک محدود اداکاراؤں کا ڈانس دیکھنے کے بعد سرٹیفکیٹ ایشو،ڈرامہ اس عمل سے تباہی کی طرف گامزن،کلچرمنسٹر اس کا نوٹس لیں،تھیٹر کے سنجیدہ حلقوں کا اظہار تشویش، سٹیج ڈرامہ کو سنسر کرنے کے لئے سنسر ٹیم کے ارکان اپنے دوستوں کے ہمراہ تھیٹر آتے ہیں اور صرف اداکاراؤں کے ڈانس دیکھنے کے بعد اور چائے بسکٹ کھانے کے بعدانہیں سنسر سرٹیفکیٹ ایشو کرکے چلتے بنتے ہیں۔یہ ممبران اپنے دوتوں کے ہمراہ گانا تو پورا دیکھتے ہیں مگر نہ تو ڈرامے کا سین چیک کیا جاتا ہے اورنہ ہی ڈرامے کا سکرپٹ چیک کیا جاتا ہے اور نہ ہی دیگر اداکاروں کی اداکاری،سنسر ٹیم کے اس عمل سے خائف تھیٹر کے سنجیدہ حلقوں نے اظہار تشویش کرتے ہوئے کہاکہ اس سے ڈرامہ تباہی کی طرف جارہا ہے کلچرمنسٹر کو اس بات کا نوٹس لینا چاہیئے اور ایسی ٹیم تشکیل دینی چاہیے جو تھیٹر کے بارے میں جانتی ہو۔شاہد حمید،شان،معمر رانا،مسعود بٹ،پرویز کلیم،میگھا،ماہ نور،شاہدہ منی،محمد قوی خان،لائبہ علی،سہراب افگن،سٹار میکر جرار رضوی،یار محمد شمسی صابری،گلفام،ہانی بلوچ،اچھی خان،ذویا قاضی،مایا سونو خان،ڈیشی راج،آغا قیصر عباس،سدرہ نور،ندا چوہدری،آفرین خان،آفرین پری،آشا چوہدری،عامر راجہ،بی جی،سفیان احمد،انوسنٹ اشفاق،محرمہ علی،عباس باجوہ،آغا حیدر،شین فریال،نادیہ علی،سوھنی بلوچ،اشرف خان،عذرا آفتاب،حیدر سلطان،بابرہ علی،تابندہ علی،ڈاکٹر اجمل ملک،مختار احمد چوہان،فیصل بخاری،چوہدری اعجاز کامران،قیصر ثناء اللہ خان،حاجی عبد الرزاق،پریسہ،حنا ملک،شہزاد چندا،ہنی البیلا،حسن مراد،امان اللہ،نجم زیدی،شمس رانا،عروج،ثمینہ بٹ،سرفراز وکی،بینا سحر،عائشہ جاوید،ابرار ہاشمی،وقاص کیدو،زری لعل،شہہ پارہ،ستارہ بیگ،لکی ڈیئر،طاہر نوشاد،مختار چن،اسد مکھڑا،شجر عباس،نواز انجم،احمد نواز،محسن گیلانی،دلاور ملک،عباس اشرف،افشین اشرف،بینا چوہدری اور دیگر کا کہنا ہے کہ سنسر شوپر وہ پوری ایمانداری کے ساتھ ہر چیز پر فوکس کرے اور اخلاقیات سے ہٹ کر پیش کئے جانے والے ڈرامے کو سنسر سرٹیفکیٹ ایشو ہی نہ کرے اس کے ساتھ ساتھ سنسر ٹیم کے ممبران کے علاوہ کوئی اور آدمی ان کے ساتھ نہ ہو کیونکہ انہوں نے سنسر شوکو عیاشی کا زریعہ بنایا ہوا ہے اور وہ اپنے ساتھ اپنے دوستوں کو لے کر آتے ہیں ا ور صرف گانو ں پر ڈانس دیکھ کر چلے جاتے ہیں ان حلقوں کا کہنا ہے کہ اگر فیملی تھیٹر کو فروغ دینا ہے اور ڈرامہ کو تباہی سے بچانا ہے تو اس کا فوری سدباب کیا جائے۔

مزید : کلچر