’وہ 2 دن تک مجھے رقص پر مجبور کر کے میرا ریپ کرتا رہا‘

’وہ 2 دن تک مجھے رقص پر مجبور کر کے میرا ریپ کرتا رہا‘
’وہ 2 دن تک مجھے رقص پر مجبور کر کے میرا ریپ کرتا رہا‘

  



میڈرڈ(مانیٹرنگ ڈیسک) ایک 23سالہ برطانوی لڑکی چھٹیاں منانے سپین گئی جہاں اسے ایک 28سالہ ورغلا کر اپنے فلیٹ پر لے گیا اور دو روز تک محبوس رکھ کر بدترین جنسی و جسمانی تشدد کا نشانہ بناتا رہا۔ میل آن لائن کے مطابق لڑکی نے عدالت میں بتایا کہ ”میری ایک سیاحتی مقام پر ڈائلن روری راجرز نامی اس نوجوان سے دوستی ہوئی اور میں ایک دوست کی حیثیت سے اس کے فلیٹ پر چلی گئی لیکن وہاں پہنچتے ہی اس نے میرے ساتھ دست درازی شروع کر دی اور میرے مزاحمت کرنے پر شدید تشدد کا نشانہ بنایا۔ دو روز تک اس نے مجھے اپنے فلیٹ میں قید رکھا اور جنسی زیادتی کرتا رہا۔“

لڑکی کا کہنا تھا کہ ”ان دو دنوں میں اس نے مجھ پر مرچوں کا سپرے کیا، مجھے انڈے مارے اور میرا سر دیوار سے ٹکراتا رہا۔ اس نے میرے منہ پر ٹیپ لگا دی تھی اور ہاتھ بھی باندھ دیئے تھے۔ میرے فون سے اس نے سم بھی نکال دی تھی تاکہ میں کسی سے رابطہ نہ کر سکوں۔ ایک موقع پر اسے نے کہا کہ ’تم مر بھی جاﺅ تو مجھے کوئی پروا نہیں۔‘ ‘ رپورٹ کے مطابق دوسرے روز شام وہ ڈائلن گھر سے باہر گیا اور لڑکی کسی طرح وہاں سے فرار ہو کر پولیس کے پاس پہنچ گئی۔ پولیس نے ڈائلن کو پکڑ کر سپین کے شہر پالماکی ایک عدالت میں پیش کر دیا جہاں سے اب اسے 9سال قید کی سزا سنا کر جیل بھجوا دیا گیا ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...