وہ یہودی جسے طالبان نے پکڑا لیکن پھر خود ہی چھوڑ دیا، لیکن کیوں؟ وجہ جان کر آپ کو بھی ہنسی آجائے

وہ یہودی جسے طالبان نے پکڑا لیکن پھر خود ہی چھوڑ دیا، لیکن کیوں؟ وجہ جان کر آپ ...
وہ یہودی جسے طالبان نے پکڑا لیکن پھر خود ہی چھوڑ دیا، لیکن کیوں؟ وجہ جان کر آپ کو بھی ہنسی آجائے

  



کابل(مانیٹرنگ ڈیسک) افغانستان میں طالبان نے ایک یہودی کو پکڑ کر جیل میں ڈالا اور پھر خود ہی اسے چھوڑ دیا، جس کی وجہ ایسی ہے کہ سن کر آپ کو ہنسی آ جائے گی۔ اسرائیل نیشنل نیوز کے مطابق یہ 66سالہ زابلون سائمن توف ہے جسے طالبان نے قید کیااور پھر اس لیے چھوڑ دیا کہ وہ ساتھی قیدیوں کے ساتھ تکرار بہت کرتا تھا۔ وہ ہمہ وقت کسی نہ کسی کے ساتھ بحث میں الجھا رہتا اور اس کی بلند آواز طالبان کو اس قدر ناگوار گزرنے لگی کہ بالآخر انہوں نے اسے اٹھا کر جیل سے باہر پھینک دیا۔

فارن پالیسی سے گفتگو کرتے ہوئے سائمن توف کا کہنا تھا کہ ”طالبان مجھ پر بہت تشدد کرتے تھے۔ انہوں نے مجھے کئی بار جیل میں ڈالا۔ اس کی وجہ کابل میں میری بنائی گئی یہودی عبادت گاہ تھی۔ یہ عبادت گاہ میں نے اپنے ہاتھوں سے بنائی اور سجائی سنواری تھی۔ وہ چاہتے تھے کہ میں کسی طرح یہ عبادت گاہ انہیں فروخت کر دوں۔میرے مسلسل انکار کی وجہ سے انہوں نے کئی بار مجھے گرفتار کیا۔ انہوں نے عبادت گاہ میں رکھی میری ’تورات‘ بھی چوری کر لی تھی۔ “ واضح رہے کہ سائمن توف کو افغانستان کا آخری یہودی شہری بھی کہا جاتا ہے۔ طالبان کی حکومت آنے سے قبل افغانستان میں یہودیوں کی تعداد سینکڑوں میں تھی تاہم وہ ہجرت کرکے افغانستان سے چلے گئے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...