خصوصی افراد کی بحالی کیلئے اقدامات وقت کی ضرورت،شہزاد حسن

خصوصی افراد کی بحالی کیلئے اقدامات وقت کی ضرورت،شہزاد حسن

  

لاہور(پ ر) انٹرنیشنل ہیومن رائٹس موومنٹ کے مرکزی سینئر وائس چیئرمین میاں شہزادحسن وٹوایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ معاشرے کے خصوصی افراد کی بحالی کیلئے دوررس اصلاحات اور سنجیدہ اقدامات کے ساتھ ساتھ انہیں خصوصی مراعات فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔جہاں نابینا افراد بھی سراپا احتجاج ہوں وہاں حکمرانوں کی بینائی ایک بڑا سوالیہ نشان ہے۔جسمانی معذروی کوئی عیب نہیں بلکہ حکمت خداوندی ہے تاہم ان افراد کی قدرتی صلاحیتوں اورتوانائیوں سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔خصوصی افرادکومنتخب ایوانوں سمیت ریاست کے ہرشعبہ میں بھرپورنمائندگی دی جائے۔ ہمارے ہاں خصوصی افراداحساس محرومی سے دوچار ہیں،انہیں ناکارہ اوربوجھ سمجھناہرگزدرست نہیں ہے۔وہ ایک اجلاس سے خطاب کررہے تھے۔ میاں شہزادحسن وٹوایڈووکیٹ نے مزید کہا کہ پاکستان میں ہزاروں خصوصی افرادنے مختلف شعبہ جات میں اپنی صلاحیتوں کالوہامنوایا ہے۔بدقسمتی سے ہمارے ہاں خصوصی افراد ریاست کی طرف سے دی جانیوالی مراعات سے محروم رہتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ خصوصی افراد کیلئے دویاپانچ فیصد کوٹہ مقررکرنا کافی نہیں،انہیں تعلیمی اداروں میں داخلوں اور ملازمتوں میں بھی ترجیح دی جائے۔شہری اپنے آس پاس موجودخصوصی افراد کے ساتھ خاص طورپر محبت اور احترام سے پیش آئیں۔انہوں نے کہا کہ مہذب معاشرتی اقدار کی روشنی میں خصوصی افرادکواحساس کمتری سے بچانے کی ضرورت ہے ورنہ ان کی صلاحیتیوں کوزنگ لگنے کاڈرہے۔ہم خصوصی افرادکی معذوری تودیکھتے ہیں مگران کی پوشیدہ صلاحیتوں کوان دیکھاکردیا جاتا ہے،ہمیں یہ مجرمانہ روش بدلناہوگی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -