گرینڈ امن  جرگہ، لغاری اور کھیتران برادری میں صلح ہوگئی

 گرینڈ امن  جرگہ، لغاری اور کھیتران برادری میں صلح ہوگئی

  

 ڈیرہ غازیخان(سٹی رپورٹر)گرینڈ امن مصالحتی جرگہ کامیاب ہوگیا(بقیہ نمبر11صفحہ6پر)

،تفصیلات کے مطابق پنجاب کے سرحدی علاقہ بواٹہ اور بلوچستان کے علاقہ رکنی میں قبائلی کشیدگی کی وجہ سے مجموعی طور پر پانچ افراد جاں بحق جبکہ بلوچستان پولیس کے اہلکاروں سمیت بارہ افراد زخمی ہو گئے تھے جاں بحق ہونے والوں میں لغاری برادری کے تین اورکھیتران برادری کے تین افراد شامل ہیں قبائلی علاقہ میں بڑھتی ہوئے تصادم اور کشیدگی کو روکنے کے لیے سابق وزیر داخلہ بلوچستان سینیٹر میر سرفراز خان بگٹی کی قیادت امن مصالحتی جرگہ قائم کیا گیا جس میں میر محبت خان مری،میر عتیق الرحمن بزدار،میر نثار خان مری،میر عبد القیوم خان مری،وڈیرہ نذیر خان مری سمیت  بزدار،بگٹی اورمری مقدمین و معززین امن مصالحتی جرگہ میں شامل تھے اس سلسلے میں میر ذیشان حیدر خان لغاری کی سربراہی میں لغاری قوم کے معززین و مقدمین لغاری چیف سردار جمال خان لغاری اور سردار اویس احمد خان لغاری کی حمایت سے کھیتران اقوام کے نمائندہ افراد سے ملاقات کے لئے رکنی گراونڈ پہنچے جہاں بلوچی روایات کے مطابق میر کریم خان کھیتران وڈیرہ میر محمد کھیتران سمیت دیگر معتبرین نے ان کا استقبال اور روایتی حال احوال کیا گیا اس موقع پر لغاری قوم کے بعض افراد نے اپنی صفائی دیتے ہوئے کہا کہ وہ اس شر پسندی میں ملوث نہیں رہے جس پر امن مصالحتی جرگہ کے ارکان نے اپنا فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ لغاری اقوام کے تین ذیلی شاخیں جو کھیتران اقوام کے قتل میں جبکہ کھیتران قوم کی ایک شاخ کے افراد لغاری قوم کے افراد کے قتل میں ملوث ہے تاہم تمام کھیتران لغاری بھائی بھائی ہیں اور ایک دوسرے کے علاقے میں پہلے کی طرح آ جاسکیں گے اور سب پابندیاں ختم تصور ہوگئی ا من مصالحتی جرگہ کے ارکان نے لغاری اور کھیتران قبائل نے مستقل جنگ بندی سمیت دونوں فریقین میں صلح کرا دی اس موقع پر امن مصالحتی جرگہ کے سربراہ میر سرفراز خان بگٹی نے سب معتبرین سمیت دونوں اقوام کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے امن عمل کی بحالی کے لیے کوشش کو کامیاب بنانے میں پر خلوص طریقے سے ہمارا ساتھ دیا۔

صلح

مزید :

ملتان صفحہ آخر -